مفاہمت کی پالیسی پر سخت مایوس ہیں، جیالوں نے جذبات زرداری تک پہنچا دئیے

لاہور (سید شعیب الدین سے) پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین اور سابق صدر آصف زرداری سے ملاقات میں جیالوں نے مفاہمت کی پالیسی پر کارکنوں کے جذبات صدر آصف زرداری تک پہنچا دئیے ہیں۔ پیپلزپارٹی لاہور تنظیم کے عہدیداروں کی آصف زرداری سے ملاقات میں ’’جیالوں‘‘ نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) کی حمایت کی پالیسی سے کارکن مایوس ہو رہے ہیں۔ خصوصاً اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ کے مسلم لیگ (ن) کیلئے دوستانہ اور محبت بھرے بیانات پر کارکن حیران ہیں کہ مسلم لیگ (ن) کے اپوزیشن لیڈر چودھری نثار ہمارے وزیراعظم اور پارٹی کو گالیاں تک نکالتے، برا بھلا کہتے تھے۔ یہاں مشکلات میں گھری مسلم لیگ (ن) کو سہارا دیا جا رہا ہے۔ ایسی پالیسی کے بعد کس منہ سے عوام سے ووٹ مانگنے جائیں گے۔ اندرونی ذرائع کے مطابق ایک عہدیدار نے کہا کہ رخسانہ بنگش نے 5 سال صدر آصف زرداری سے ملنے نہیں دیا تھا۔ جب بھی ملنے گئے رخسانہ بنگش نے ملاقات کا موقع نہیں دیا۔ ایک عہدیدار نے کہا کہ موجودہ صورتحال پر کارکن بہت مایوس ہیں۔ جیالے پارٹی بھی چھوڑ گئے ہیں۔ مفاہمت کی پالیسی نے بے حد مایوس کیا ہے۔ جن کے ساتھ ہماری 30 برس سے جنگ چل رہی ہے، جن سے لڑ رہے ہیں۔ ان کے مقابلے پر الیکشن لڑیں گے تو کیسے ان کا مقابلہ کریں گے۔ مسلم لیگ (ن) ہماری اصلی دشمن ہے۔ کل اس لاہور میں ہماری 9/8 سیٹیں ہوتی تھیں اب ایک بھی نہیں رہی۔ ذوالفقار علی بھٹو، بے نظیر بھٹو نے جانیں جمہوریت کیلئے دیں مگر آج ہم کس جمہوریت دشمن جماعت کا ساتھ دے رہے ہیں۔ خورشید شاہ کی باتوں کی سمجھ نہیں آتی۔ نجانے وہ کس کی مدد کر رہے ہیں۔ آصف زرداری سول نافرمانی کا اعلان کریں تو انہیں غدار کہا جائیگا، نوٹ پر نعرہ لکھیں تو غدار کہا جائیگا۔ ایک عہدیدار نے کہا کہ پیپلزپارٹی کے دور میں لاہور میں متروکہ وقف املاک بورڈ میں جن ورکرز کو ملازمتیں دی گئیں وہ آج چھینی جا رہی ہیں۔ لاہور کی تنظیم کے عہدیدار نے کہا کہ پنجاب کی تنظیم نے بیڑہ غرق کر دیا ہے۔ ایک عہدیدار نے سابق وزرائے اعظم یوسف رضا گیلانی اور راجہ پرویز اشرف کا شکوہ کیا کہ انہوں نے 5 برس لاہور پیپلزپارٹی کو کچھ نہیں دیا۔