پاکستان میں دہشتگردی طالبان نہیں، امریکہ، بھارت کر رہے ہیں: منور حسن

پاکستان میں دہشتگردی طالبان نہیں، امریکہ، بھارت کر رہے ہیں: منور حسن

لاہور (خصوصی نامہ نگار) امیر جماعت اسلامی منور حسن نے کہا ہے کہ دہشت گردی کے خاتمے کیلئے ضروری ہے کہ امریکہ فوری طور پر خطے سے اپنی فوجیں نکال لے اور پاکستان کے معاملات میں دخل دینے سے گریز کرے۔ امریکہ پاکستان کو دہشت گردی کے حوالے کرکے خود طالبان سے مذاکرات کر رہا ہے اور ہمیں طالبان سے دور رہنے اور کسی قسم کے مذاکرات نہ کرنے کی ہدایات دے رہا ہے۔ پاکستان میں دہشت گردی طالبان اور القاعدہ نہیں امریکہ اور بھارت کررہا ہے جس کا الزام طالبان اور القاعدہ پر لگا کر ڈرون حملوں کا جواز پیش کیا جاتا ہے پاکستان کو القاعدہ کے نام پر بلیک میل کرنے کی امریکی چالیں ناکام ہوچکی ہیں ،بھارت اور امریکہ کی خفیہ ایجنسیاں بلوچستان میں علیحدگی پسندوں میں رقوم اور اسلحہ تقسیم کررہی ہیں جس کے تمام ثبوت ہمارے سکیورٹی اداروں کے پاس موجود ہیں ،کیری کا یہ بیان مضحکہ خیز اور حقائق کو مسخ کرنے کی ناکام کوشش ہے کہ” پاکستان میں دہشت گردی ایمن الظواہری جیسے لوگ کررہے ہیں“۔ حکمرانوں نے پاکستان کو امریکی باجگزار ریاست بنا دیا ہے۔امریکہ ہماری آزادی اور خودمختاری کا مذاق اڑا رہا ہے لیکن قومی غیر ت سے بے نیاز حکمران امریکہ کے سامنے بھیگی بلی بنے ہوئے ہیں اور کسی نے امریکی سیکرٹری اور آف اسٹیٹ جان کیری کے بے تکے بیانات کا نوٹس نہیں لیا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے منصورہ میں مختلف وفود سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔انہوںنے کہا کہ اب حکمرانوں کو عوام کے سامنے اپنی پوزیشن واضح کرنا ہوگی جنہوں نے ڈرون حملے رکوانے ،پاکستان کی سا لمیت کویقینی بنانے ،اس کی آزادی و خود مختاری کا دفاع کرنے اور عافیہ صدیقی کو رہا کروانے جیسے وعدے کر کے عوام سے ووٹ حاصل کئے۔