حکومت نے آئی ایم ایف کی شرط پر انسداد منی لانڈرنگ ایکٹ میں ترمیم کا فیصلہ کرلیا

حکومت نے آئی ایم ایف کی شرط پر انسداد منی لانڈرنگ ایکٹ میں ترمیم کا فیصلہ کرلیا

اسلام آباد(ثناء نیوز) وفاقی حکومت نے آئی ایم ایف کی شرط پوری کرنے کیلئے انسداد منی لانڈرنگ ایکٹ میں ترامیم کا مسودہ منظوری کیلئے پارلیمنٹ پیش کرنیکا فیصلہ کیا ہے۔وزارت خزانہ ذرائع  کے مطابق  آئی ایم ایف کیساتھ ہونے والے تیسری اقتصادی جائزہ میں سٹرکلچرل بنچ مارک کے طور پر یہ طے پایا ہے کہ ستمبر 2014  تک  انسداد منی لانڈرنگ ایکٹ میں ترامیم  متعارف کروائی جائیں گی جس کے تحت ٹیکس چوری کے بڑے کیسوں کو بھی  انسداد منی لانڈرنگ  کے قوانین کے تحت ڈیل کیا جائیگا اور ٹیکس چوری کو منی لانڈرنگ قراردیا جائیگا۔ذرائع نے بتایا کہ اس حوالے سے وفاقی وزیر خزانہ اسحق ڈار کی زیر صدارت میں ہونیوالے قومی ایگزیکٹوکمیٹی(این ای سی)کے اجلاس میں انسداد منی لانڈرنگ ایکٹ میں ترامیم کے ابتدائی مسودے کے بارے میں  تفصیلی تبادلہ خیال ہوچکا ہے۔ ذرائع کے مطابق انسداد منی لانڈرنگ ایکٹ میں ترامیم کے ذریعے منی لانڈرنگ کی روک تھام کیلئے کی جانیوالی اصلاحات میں دہشتگردی کی کارروائیوں کیلیے فنانسنگ کو روکنے کیلئے ملک کی لا انفورسمنٹ ایجنسیوں اور ان کے پرسانل کے اختیارات میں اضافے کی تجویز دی گئی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ انسداد منی لانڈرنگ ایکٹ میں ترامیم  کے مسودے میں اقوام متحدہ کے پابندیوں کے فورم اور فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کیساتھ ہونیوالے مذاکرات میں دی جانیوالی تجاویزکوبھی شامل کیاگیا۔ 
منی لانڈرنگ ایکٹ