چھٹی کے روز بھی طویل لوڈشیڈنگ کئی شہروں میں مظاہرے‘ بجلی کے بل نذر آتش

لاہور+ اسلام آباد (نامہ نگاران+ نوائے وقت رپورٹ+ ایجنسیاں) ملک میں بجلی کا شارٹ فال 3ہزار میگا واٹ تک پہنچنے کے بعد ہفتہ وار چھٹی کے روز بھی شدید گرمی میں طویل اور غیراعلانیہ لوڈشیڈنگ سے عوام بلبلا اٹھے۔ لاہور سمیت کئی شہروں میں لوڈشیڈنگ کیخلاف احتجاجی مظاہرے کئے گئے، مظاہرین احتجاجاً بجلی کے بل بھی نذر آتش کرتے رہے اور حکومت اور واپڈا کے خلاف شدید نعرے بازی بھی کی گئی۔ حیدر آباد میں مٹی کے طوفان کے باعث 25 فیڈر بند ہو گئے جس کے باعث کئی علاقوں میں بجلی کی فراہمی معطل ہو کر رہ گئی۔ آندھی کے باعث مکان کی دیوار گرنے سے 3 افراد زخمی ہو گئے جبکہ کئی علاقوں میں گرمی کی شدت بھی برقرار رہی اور سبی میں شدید گرمی کے باعث کئی افراد بیہوش ہو گئے۔ تفصیلات کے مطابق شہروں اور دیہات میں لوڈشیڈنگ کا دورانیہ 10 سے 18 گھنٹے رہا جبکہ کئی شہروں میں پانی کی بھی شدید قلت برقرار رہی۔ این ٹی ڈی سی ذرائع کے مطابق اتوار کے روز ملک میں بجلی کی پیداوار 12 ہزار 500 اور طلب 15ہزار 500 میگاواٹ رہی اس طرح بجلی کی طلب اور پیداوار میں فرق بڑھ کر 3ہزار  میگا واٹ تک پہنچ گیا۔ وسطی پنجاب کے شہری علاقوں میں لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ 10 جبکہ دیہی علاقوں میں 14 گھنٹے تک محیط رہا۔ جنوبی پنجاب، بلوچستان، سندھ اور خیبر پی کے میں بجلی کی غیر اعلانیہ بندش کا دورانیہ 14 سے 18 گھنٹے پر مشتمل رہا۔ ادھر لوڈشیڈنگ کیخلاف مظاہروں میں عوام نے حکمرانون کے خلاف شدید نعرے بازی کی اور  حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ غیراعلانیہ بدترین لوڈشیڈنگ کو فوری طور پر ختم کر ے۔ علاوہ ازیں سکھر اور لاڑکانہ میں شہری سڑکوں پر نکل آئے۔ ادھر لاہور کے علاقے ساندہ اکرم پارک میں بجلی کی طویل بندش کے خلاف مظاہرہ کیا گیا۔ مظاہرین نے بند روڈ بلاک کر دی۔ ان کا کہنا تھا کہ تین دن سے ٹرانسفارمر خراب ہے لیکن لیسکو حکام ٹال مٹول سے کام لے رہے ہیں۔ سکھر کے مختلف علاقوں میں بھی شہری سراپا احتجاج بنے رہے۔ پریس کلب کے سامنے ہونے والے مظاہرے میں خواتین اور بچے بھی شریک ہوئے۔ مظاہرین نے ٹائر جلا کر ٹریفک بلاک رکھی، لاڑکانہ میں بھی پندرہ سے اٹھارہ گھنٹے کی لوڈشیڈنگ کے خلاف تحریک انصاف نے مظاہرہ کیا۔ علاوہ ازیں تربیلا ڈیم میں پانی ڈیڈ لیول سے 11 فٹ سے زائد رہ گیا۔ ڈیمز میں پانی کی آمد کم ہونے سے لوڈشیڈنگ بڑھنے کا خدشہ ہے۔ محکمہ موسمیات کے فلڈ فورکاسٹنگ ڈویژن کے مطابق تربیلا میں پانی کی سطح 1389فٹ ریکارڈ کی گئی جو گذشتہ سال کے مقابلے انتہائی کم سطح پر ہے۔ زرعی ماہرین کے مطابق تربیلا ڈیم میں پانی کی حالیہ صورتحال خریف کے فصلوں کے لئے کسی حد تک پانی کی کمی سامنا ہو سکتا ہے۔ چک امرو سے نامہ نگار کے مطابق بجلی کی طویل ترین بندش کیخلاف قصبہ نورکوٹ میں شدید احتجاج کیا گیا اور خواتین نے سینہ کوبی کی۔ ادھر حیدر آباد میں مٹی کے طوفان کے باعث 25 فیڈرز کو بند کر دیا گیا۔ دیوار گرنے سے تین افراد زخمی ہو گئے۔ حیسکو ذرائع کے مطابق فیڈرز بند ہونے کے باعث شہر کے متعدد علاقوں کو بجلی کی فراہمی معطل ہو گئی۔ حیدر آباد، ٹنڈو الہ یار، میرپور خاص اور مٹیاری میں فیڈرز بند کئے گئے۔
لوڈشیڈنگ/ مظاہرے