خفیہ ہاتھ مذاکرات روک رہا ہے، حکومت سیاسی جماعتوں کو اعتماد میں لے: سمیع الحق

لاہور/ اکوڑہ خٹک (آئی این پی) جمعیت علماء اسلام (س) کے سربراہ مولانا سمیع الحق نے کہا ہے کہ اگر کوئی خفیہ ہاتھ طالبان سے مذاکرات کی راہ میں رکاوٹ ڈال رہا ہے تو حکومت اس پر تمام جماعتوں کو اعتماد میں لے‘ طالبان سے مذاکراتی عمل ادھورا رہنا ملک کے مفاد میں نہیں‘ ہم بھی حکمرانوں کو خدا کا واسطہ دیتے ہیں وہ فوجی آپریشن کے بجائے مذاکرات کے ذریعے ملک میں امن قائم کریں۔ وہ اتوار کو جمعیت علماء اسلام (س) کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات مولانا عاصم مخدوم اور پارٹی کے دیگر رہنمائوں سے ٹیلی فونک گفتگو کر رہے تھے۔ مولانا سمیع الحق نے کہا کہ مذاکرات انتہائی درست سمت میں آگے بڑھ رہے تھے لیکن اچانک حکومت نے مذاکراتی عمل کو ادھورا چھوڑ کر فوجی آپریشن کا غیرعلانیہ آغاز کر دیا جس کی وجہ سے معاملات مزید خراب ہونے کا خطرہ موجود ہے اور ہم بھی حکومت کو خدا کاواسطہ دیتے ہیں کہ وہ طاقت کے بجائے مذاکراتی کے ذریعے ملک میں دہشت گردی کا خاتمہ اور امن قائم کرے۔ انہوں نے کہا کہ ہم جانتے ہیں کہ بہت سے ایسے خفیہ ہاتھ ہیں جو ملک میں طالبان سے مذاکرات کے مخالف ہیں اور وقفے وقفے سے مذاکرات کی راہ میں روڑے اٹکاتے ہیں اور اب بھی کوئی خفیہ ہاتھ حکومت کو مذاکرات سے روک رہا ہے تو اس پر حکومت کو خاموش رہنے کے بجائے تمام جماعتوںکا اعتماد میں لینا چاہیے۔