پنجاب میں وی وی آئی پیز کی طرف سے ہیلی کاپٹر کا بے دریغ استعمال‘ پٹرول کے پیسے ختم

لاہور (معین اظہر سے) پنجاب میں وی وی آئی پیز کی طرف سے ہیلی کاپٹر کے بے دریغ استعمال کی وجہ سے بجٹ میں اسکے پٹرول کے پیسے ختم ہوگئے جس پر پی ایس او اور شیل کمپنیو ں نے پٹرول کی رقم جاری نہ کرنے پر پٹرول دینے سے انکار کردیا ہے۔ محکمہ سروسز جنرل ایڈمنسٹریشن نے وزیراعلیٰ پنجاب کو پٹرول کیلئے مزید 1 کروڑ 20 لاکھ جاری کرنے کی درخواست کی ہے۔ بجٹ میں ہیلی کاپٹر ایم 17 کے پٹرول کیلئے دو کروڑ روپے رکھے گئے تھے جو پورے سال کیلئے تھے لیکن وی وی آئی پی کی طرف سے ہیلی کاپٹر کے استعمال کے بعد یہ رقم 6 ماہ میں ختم ہوگئی جبکہ تقریباً 20 لاکھ روپے ادھار کے بھی دینے ہیں۔ محکمہ سروسز جنرل ایڈمنسریشن کے ذرائع کے مطابق صرف وی وی آئی پی نے ہیلی کاپٹر استعمال نہیں کیا۔ بلوچستان اور سیلاب زدہ علاقوں میں ریلیف اپریشن کے طور پر بھی ہیلی کاپٹر استعمال ہوتا رہا۔ ایڈیشنل چیف سیکرٹری پنجاب سہیل عامر نے وزیراعلیٰ پنجاب کو رپورٹ بھجوائی ہے کہ بجٹ میں ہیلی کاپٹر کے پٹرول کیلئے 2 کروڑ روپے سالانہ رکھے گئے تھے جس کے بعد 15 فیصد اس پر کٹوتی عائد کردی گئی تھی اور رقم 1 کڑور 70 لاکھ روپے رہ گئی لیکن ہیلی کاپٹر کے وی آئی پی آپریشن کی وجہ سے محکمہ خزانہ سے درخواست کی گئی تھی کہ وہ 15 فیصد کٹوتی نہ کریں اور ہیلی کاپٹر کے پٹرول کیلئے پوری رقم فراہم کی جائے جس پر15 فیصد کٹوتی ختم کرکے 2 کروڑ جاری کر دئیے گئے۔ یکم جولائی 2013ء کو پٹرول کیلئے 42 لاکھ 50 ہزار جاری کئے گئے۔ اسکے بعد 28 اگست 2013ء کو 42 لاکھ 50 ہزار جاری کئے گئے۔ 11 اکتوبر2013ء کو مزید 42 لاکھ 50 ہزار جاری کئے گئے۔ 6 نومبر 2013ء کو بھی 42 لاکھ پچاس ہزار جاری ہوئے، اسکے بعد 30 لاکھ مزید جاری ہوئے جو کے کٹ کی گئی رقم تھی اسلئے پٹرول کے پیسے ختم ہو گئے۔ ایوی ایشن فلائیٹ کو ایم ایس پی ایس او کی طرف سے 12 نومبر کو 71 لاکھ ، 37 ہزار 171 روپے پٹرول بقایا جات کی رقم منظور ہوئی تھی جبکہ انوائس کے تحت ہیلی کاپٹر کے پٹرول کی مد میں 67 لاکھ 74 ہزارروپے ادا کرنے ہیں جبکہ اس وقت 53 لاکھ 51 ہزار پی ایس او اور 28 لاکھ 92 ہزار کے شیل کے بل کیلئے کیس جاری کیا جا چکا ہے چند روز میں رقم ادا ہوجائیگی جبکہ تمام رقم فراہم کرنے کے بعد یکم دسمبر کو ہیلی کاپٹر کے پٹرول کے لئے 6 لاکھ 75 ہزار 114 روپے کی رقم اکاونٹ میں رہ گئی تھی جبکہ تقریباً اس وقت دسمبر کے آخر میں پی ایس او کا 20 لاکھ 64 ہزار، 729 روپے کا بل پینڈنگ ہے جس پر اگر رقم ادا نہ کی گئی تو پی ایس او پٹرول کی سپلائی معطل کردیگا جس کی وجہ سے وی وی ائی پی کی طرف سے ہیلی کاپٹر کا استعمال رک جائیگا جس پر وزیراعلیٰ پنجاب کو درخواست دی گئی ہے کہ وہ 1 کروڑ 20 لاکھ روپے کی رقم بطور سپلیمنٹری گرانٹ مزید 6 ماہ کیلئے جاری کریں تاکہ ہیلی کاپٹر زیر استعمال رہے جس کی وجہ سے وی وی آئی پیز ہیلی کاپٹر استعمال کرتے رہیں اور ساتھ ساتھ ریلف آپریشن بھی نہ رک سکیں جس پر وزیراعلیٰ پنجاب نے 1 کروڑ 20 لاکھ کی منظوری دیدی ہے جبکہ ایوی ایشن فلائیٹ کے ریکارڈ کے مطابق تقریباً 80 گھنٹے ہیلی کاپٹر استعمال ہوا جس میں سے 60 گھنٹے وی وی آئی پیز نے استعمال کئے اور صرف 20 گھنٹے ریلیف آپریشن کے لئے استعمال ہوئے۔ اس میں بھی زیادہ تر وی وی آئی پیز نے ریلیف کے علاقوںکا دورہ کیا تھا۔ محکمہ سروسز جنرل ایڈمنسٹریشن کا موقف ہے کہ حکومت ہیلی کاپٹر کو زیادہ تر ریلیف آپریشن کیلئے استعمال کر رہی ہے۔