بھارت کسی صورت پاکستان کی سٹریٹجک اہمیت کم نہیں کر سکتا: جنرل (ر) ضیاء الدین

لاہور (خبر نگار) آئی ایس آئی کے سابق سربراہ جنرل (ر) ضیاء الدین خواجہ نے کہا ہے کہ بھارت جتنی مرضی کوشش کرے پاکستان کی خطے میں اہمیت کو کم نہیں کر سکتا۔ بھارت ایران میں جتنی چاہے کوشش کرے ایران اسے اس کی مرضی کا ’’ٹریڈ کاریڈور‘‘ نہیں دے گا۔ ایران اور امریکہ کے دوران ایٹمی معاہدے سے پاکستان کی سٹریٹجک اہمیت مزید بڑھے گی۔ بھارت کی طرف سے ایران کی بندرگاہ چہارباہ اور چہارباہ سے افغان سرحد تک سڑک کی تعمیر پر بھارت کے 20 کروڑ ڈالر خرچ کرنے سے خطے میں بھارت کا اثر و رسوخ بڑھنے کے حوالے سے نوائے وقت سے گفتگو کرتے ہوئے جنرل ضیاء الدین خواجہ نے کہا ہے کہ بھارت کی خواہش ہے کہ امریکہ کی افغانستان سے رخصتی کے بعد اسی کا افغانستان میں کردار رہے تاکہ ترکمانستان اور دیگر ریاستوں سے بھی وہ رابطے میں رہ سکے جس کیلئے وہ ایرانی بندرگاہ کی تعمیر میں مدد دے رہا ہے اور اب سڑک کی تعمیر میں بھی تعاون کرنا چاہ رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کی یہ ساری کوششیں اس لئے ہیں کہ پاکستان نے گوادر کی بندرگاہ چین کے سپرد کر دی ہے اور وہ گوادر سے چین کی سرحد تک کاریڈور بنا رہا ہے مگر بھارت یہ خوش فہمی نکال دے کہ ایران اسے ایسا کوئی کاریڈور دے گا۔ اس نے اگر کوئی کاریڈور بنانا ہو گا تو ایران خود بنائے گا۔ ایران کا انفراسٹرکچر بھارت سے کہیں بہتر ہے۔