چار دن میں 7دھماکے‘ ملک بھر میں تشویش کی لہر دوڑ گئی

کراچی(اسٹاف رپورٹر)سانحہ لاہور اور پھر لعل شہباز قلندر کے مزار پر دھماکے کے بعد کراچی سمیت پورے ملک میں تشویش کی لہر دوڑ گئی۔ سوشل میڈیا پر یہ بات موضوع بحث بن گئی کہ پاکستان کو کون غیر مستحکم کررہا ہے۔ اس دوران ایک واٹس ایپ پیغام بھی موضوع بحث بنا ہوا ہے جس کی بازگشت الیکٹرانک میڈیا میں بھی سنائی دے رہی ہے۔ کئی چینلوں پر یہ بحث کی گئی کہ اس ہولناک پیغام کی حقیقت کیاہے۔ اس پیغام کے ذریعے پورے ملک کے شہریوں کو وارننگ دی گئی تھی اور آگاہ کیا گیا کہ عوام بے مقصد گھروں سے نہ نکلیں۔ رش کے مقامات سے دور رہیں۔ واٹس ایپ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ پاکستان میں بہت زیادہ دہشت گردی ہوگی جس کی پیشگی اطلاعات موجود ہیں۔ دہشت گردوں نے بڑے پیمانے پر شب خون مارنے کی تیاریاں کی ہیں۔ دہشت گردی کے زیادہ تر واقعات رات کو ہورہے ہیں۔ چار دن میں7دھماکوں نے حکومت کی رٹ کو سوالیہ نشان بنادیا ہے۔ وزیراعظم نوازشریف نے لندن میں جب اعلان کیا تھا کہ پاکستان میں دہشت گردی ختم ہوگئی ہے تو دوسرے دن پارہ چنار کے دھماکے میں20افراد ہلاک ہوگئے۔ بم دھماکوں کا آغاز12فروری کو کراچی سے ہواتھا۔
7دھماکے /تشویش