ذوالفقار مرزا کی عبوری ضمانت منظور زرداری کو جیل بھیجنے تک جدوجہد جاری رہے گی: سابق وزیر داخلہ سندھ

کراچی (این این آئی) ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج نے آرام باغ تھانے میں درج مقدمے میں ذوالفقار مرزا کی درخواست ضمانت منظور کرلی۔ ذوالفقار مرزا نے کار سرکار میں مداخلت کے مقدمہ میں درخواست ضمانت دائر کی تھی جسے عدالت نے منظور کرتے ہوئے ایک لاکھ روپے کے عوض 30 مئی تک عبوری ضمانت منظور کرلی۔ مقدمہ 9مئی کو انسداد دہشت گردی کی عدالت سے واپسی پر بکتر بند گاڑی پر چڑھ کر تقریر کرنے کے الزام میں درج کیا گیا تھا۔ ذوالفقار مرزا نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ وہ فریال تالپور اور آصف علی زرداری کو جیل بھیجنے تک جدوجہد جاری رکھیں گے۔ میری دہشت گردی کی عدالتوں سے ضمانت منظور ہوئی تو وزیر اعلی کی کرسی کھسکنے لگی۔ راو¿ انوار ملیر میں پانچ لاکھ ایکڑ قبضہ کی گئی زمینوں کی حفاطت کرتا ہے جن پر پر آصف علی زرداری نے قبضہ کیا ہوا ہے۔ انسداد دہشت گردی کی عدالت نے ڈاکٹر ذوالفقار مرزا کے مقدمات سے متعلق دو درخواستوں میں سے ایک مسترد اور دوسری منظور کرلی۔ انسداد دہشت گردی کی عدالت میں ذوالفقار مرزا نے دو درخواستیں دائر کی تھیں کہ ان کے مقدمہ کے لیے کوئی ایماندار افسر بحیثیت تفتیشی افسر تعینات کیا جائے اور وہ ایس پی کرائم برانچ آفس جاکر اپنا بیان قلم بند نہیں کراسکتے۔ دونوں درخواستوں پر عدالت نے دلائل سننے کے بعد آئی او کی تبدیلی سے متعلق ان کی درخواست مسترد کردی جبکہ بیان قلم بند کرانے کی درخواست منظور کرتے ہوئے ہدایت کی کہ وہ درخشاں تھانے جاکر اپنا بیان ریکارڈ کراسکتے ہیں۔
ذوالفقار مرزا