میری ٹائم سیکٹر تجارت بڑھانے میں نمایاں کردار ادا کرتا ہے‘ وائس ایڈمرل کلیم شوکت

کراچی (اسٹاف رپورٹر) بحریہ یونیورسٹی کے نیشنل سینٹر برائے میری ٹائم پالیسی ریسرچ نے پاکستان میری ٹائم میوزیم آڈیٹوریم میں میری ٹائم کے عالمی دن کو منانے کیلئے ایک روزہ سیمینار کا اہتمام کیا۔ سیمینار میں دن کا موضوع" بحری جہازوں‘ بندرگاہوں اور انسانوں کو مربوط کرنا" تھا‘ کمانڈر پاکستان فلیٹ وائس ایڈمرل کلیم شوکت نے تقریب کے مہمان خصوصی تھے۔ جنرل منیجر (آپریشنز) کراچی پورٹ ٹرسٹ ریئر ایڈمرل آصف حمید اور ایس ایم ایم عبیداللہ کموڈور سابق ڈائریکٹر نے تقریب کے حاضرین سے خطاب کیا۔ ڈائریکٹر جنرل NCMPR‘ ریئر ایڈمرل (ریٹائرڈ) مختار خان نے استقبالیہ خطاب میں بتایا کہ سینٹر برائے میری ٹائم پالیسی ریسرچ (NCMPR) مختلف بین الاقوامی اور قومی ایونٹس ڈسکورسز‘ سیمیناروں اور ورکشاپس کے ذریعے میری ٹائم آگاہی فراہم کر رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج کے دن کا موضوع بندرگاہوں‘ بحری جہازوں اور متعلقہ میری ٹائم سیکٹر میں شامل مختلف قسم کے کرداروں کے مابین فاصلوں کو کم کرنے اور ان کے درمیان بہترین عملی طریق کارکی شناخت کرنے اور فروغ دینے کا موقع فراہم کر رہا ہے۔ سیمینار کے دوران ریئر ایڈمرل آصف حمید نے ابھرتے ہوئے منظرمیں ابتدائی چیلنجز اور مواقع پر بات چیت کی۔ انہوں نے چیلنجز جیساکہ ماحولیاتی صفائی‘ بھاری سرمایہ کاری اور واٹرفرنٹ کے بارے میں خصوصی قسم کی معلومات کی کمی پر اظہار خیال کیا۔ حاضرین سے خطاب کرتے ہوئے کموڈور (ر) ایس ایم عبیداللہ نے کہا کہ پاکستان کو سمندروں سے استفادہ کے بارے میں اپنی مختلف ضروریات اور خواہشات پر نظر ثانی کرنی چاہئے۔ اختتامی ریمارکس میں مہمان خصوصی نے کہا کہ میری ٹائم سیکٹر سمندر کے ذریعے تجارت بڑھانے پر روزگار کی تخلیق‘ خوشحالی اور استحکام میں نمایاں کردار ادا کرتا ہے۔