اندھے پن سے بچائو کیلئے قرنیہ کی ٹرانسپلانٹ ضروری ہے‘ ڈاکٹر قاضی واثق

اندھے پن سے بچائو کیلئے قرنیہ کی ٹرانسپلانٹ ضروری ہے‘ ڈاکٹر قاضی واثق

کراچی(غزالہ فصیح)عالمی یوم بصارت کے موقع پر نوائے وقت سے بات چیت کرتے ہوئے اوپتھلو جیکل سوسائٹی آف پاکستان کے صدر ڈاکٹر قاضی واثق نے بتایا کہ پاکستان میںڈھائی لاکھ سے زائد افراد قرینہ کی خرابی میں مبتلا ہیں اندھے پن سے بچائو کے لئے قرینہ کی ٹرانسپلانٹ ضروری ہے بعد از مرگ عطیہ سے د و افراد کو بصار ت مل سکتی ہے اس ضمن میں آگہی پھیلائی جائے۔ ڈاکٹر قاضی واثق نے کہاکہ ہمارے ہاں تعلیم یافتہ لوگوں میں بھی بصارت کی حفاظت کا شعور موجود نہیں کارخانوں، دکانوں میںکام کرنے والے ویلڈرز، مکینکس وغیرہ آنکھوں کی حفاظت کے لئے موزوں چشمے استعمال نہیں کرتے جس کے باعث آنکھوں کے امراض میں اضافہ ہورہا ہے کراچی میں موجود کچرے کے ڈھیر بھی آنکھوںمیں الرجی اور انفیکشن کا باعث بن رہے ہیں جو بعد آنکھوںمیں زخم کی صورت اختیارکرلیتی ہے بصارت کے متعلق جدید تحقیق نے موبائل ، کمپیوٹر اسکرین کے زیادہ دیر استعمال کو نقصان دہ قرار دیا ہے خصوصا کم عمر بچوں کے موبائل کے استعمال اور اندھیرے میں اسکرین پر نظریں جمانا خطرناک ہے ڈاکٹر واثق نے کہا کہ بچوں کے لئے گھروں اور اسکول میں آنکھوں کے نقصان سے بچائو کے اقدامات ضروری ہیں۔ کھلونا پستول اور دیگر نوکدار کھلونے بچوں کے لئے آنکھوںمیں زخم لگانے کا باعث بنتے ہیں۔ ان کے متعلق قانون بننا چاہئے کئی بیماریاں مثلا شوگر بلڈ پریشر وغیرہ بھی بصارت پر اثر انداز ہوتے ہیں آنکھوں کا بروقت معائنہ بچائو کا ذریعہ ہے۔ نیز سیلف میڈیسن سے گریز بہتر ہے ۔ ڈاکٹر کے مشورے سے آئی ڈراپ استعمال کریں۔ یوم بصارت کے حوالے سے پاکستان آئی بینک سوسائٹی نے ہینو پاک سوسائٹی میں مزدوروں کے لئے نیلم کالونی میں اسکول کے بچوں کیلئے آگاہی پیغامات میں ماہرین طب نے مشورہ دیا کہ بینائی کی حفاظت کی لئے وٹامن اے ،بیٹاکیروٹین، وٹامن سی، ای اور زنک کا پر پر مشتمل اشیا مثلا گاجر، بھنڈی، بروکلی( گوبھی)، سلاد ،خوبانی، خشک میوہ جات بادام وغیرہ اپنی غذامیں شامل کریں۔