ٹڈاپ سکینڈل کے مقدمات میں امین فہیم کی 17جولائی تک حفاظتی ضمانت

ٹڈاپ سکینڈل کے مقدمات میں امین فہیم کی 17جولائی تک حفاظتی ضمانت

کراچی (این این آئی) سندھ ہائی کورٹ نے ٹڈاپ سکینڈل میں سابق وفاقی وزیر تجارت مخدوم امین فہیم کی 17جولائی تک حفاظتی ضمانت منظور کرتے ہوئے تفتیشی آفیسر کو ریکارڈ سمیت طلب کرلیا۔ کیس کی سماعت سندھ ہائی کورٹ کے جسٹس محمد علی مظہر اور جسٹس شاہنواز طارق پر مشتمل دو رکنی بنچ نے کی۔ درخواست گذار مخدوم امین فہیم کے وکیل فاروق ایچ نائیک نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ سابق وفاقی وزیر ایف آئی آر میں نامزد نہیں تھے۔ حتمی چالان کے دوران ایف آئی اے نے مقدمے میں ان کا بھی نام شامل کرلیا اور ان کے خلاف تاحال کوئی شواہد بھی نہیں ملے۔ لہذا عدالت سے استدعا ہے کہ ایف آئی اے کو ہدایت جاری کی جائے کہ ٹڈاپ سکینڈل کے مزید کسی مقدمے میں مخدوم امین فہیم کو نامزد نہ کیا جائے۔ جبکہ ایف آئی اے کو مخدوم امین فہیم کو گرفتارکرنے سے روکا جائے۔ سندھ ہائی کورٹ نے مخدوم امین فہیم کی جانب سے دائر کردہ درخواست فوری سماعت کے لیے منظورکرتے ہوئے 17جولائی تک ان کی حفاظتی ضمانت منظور کرلی  اور ایف آئی اے کو حکم دیا کہ سابق وفاقی وزیر کو گرفتار نہ کیا جائے۔ دریں اثناء ٹڈاپ سکینڈل کے کیسز میں  وفاقی حکومت نے سندھ ہائی کورٹ میں سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کی ضمانت کے خلاف درخواست واپس لے لی۔ سندھ ہائی کورٹ میں ڈپٹی اٹارنی جنرل کی جانب سے دائر درخواست میں موقف اختیار کیا گیا کہ ایف آئی اے نے سندھ ہائی کورٹ ٹرائل کورٹ سے سابق وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کی ضمانت منظور ہونے کے خلاف نظرثانی کی درخواست دائر کی تھی، قانون کے مطابق ایف آئی اے کو کسی معاملے پر وزارت قانون کی اجازت کے بغیر اعلیٰ عدلیہ میں درخواست دائر کرنے کی اجازت نہیں، اس لئے حکومت کی ہدایت پر اس درخواست کو واپس لیا جارہا ہے۔ واضح رہے کہ 17 جون کو انسداد بدعنوانی عدالت نے ٹڈاپ سکینڈل کے 12 مقدمات میں یوسف رضا گیلانی کی ضمانت منظور کی تھی۔