بجٹ مسترد، وزیر خزانہ سے ہاتھ جوڑ کر اپیل ہے عوام پر رحم کریں: ایم کیو ایم

بجٹ مسترد، وزیر خزانہ سے ہاتھ جوڑ کر اپیل ہے عوام پر رحم کریں: ایم کیو ایم

کراچی (نوائے وقت رپورٹ) ایم کیو ایم نے وفاقی بجٹ مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ وزیر خزانہ سے ہاتھ جوڑ کر اپیل ہے کہ عوام پر رحم کریں۔ اس کے علاوہ بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کو بھی متحدہ نے تنقید کا نشانہ بنایا، ڈاکٹر فاروق ستار نے رابطہ کمیٹی کے ارکان کے ہمراہ پریس بریفنگ میں کہاکہ پارلیمنٹ میں بجٹ کی مخالفت کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ ن کی حکومت نے تینوں سالوں میں غریب دشمن بجٹ پیش کئے۔ انہوں نے کہاکہ نئے بجٹ میں سرمایہ داروں، جاگیرداروں، مراعات یافتہ طبقے کو ریلیف دیا گیا ہے نواز حکومت شاہراہیں بناکر شیرشاہ سوری کا دور یاد دلا رہی ہے۔ میٹرو بس وہاں اچھی لگتی ہیں جہاں لوگوں کے پاس کھانے کی روٹی ہو، عوام لوڈشیڈنگ سے شرابور ہیں، بجٹ سے متعلق وزیراعظم اور وزیر خزانہ سے ملنے کی کوشش کریں گے، بجلی، گیس کی قیمتوں میں کمی کی جائے۔دریں اثنا رابطہ کمیٹی نے کراچی میں موٹرسائیکل سواروں کیلیے ہیلمٹ پہننے کی پابندی کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا اس پابندی پر موثر عملدرآمد اور لوگوں کو آگاہی فراہم کرنے کے لیے 10 روز کی مہلت دی جائے۔ آن لائن کے مطابق متحدہ قومی موومنٹ نے نئے مالی سال کے لیے سندھ کا 6کھرب 68ارب روپے کا شیڈو بجٹ پیش کردیا ہے اور حکومت سندھ سے مطالبہ کیا ہے کہ نئے مالی سال میں حکومت اپنے وسائل کا ساڑھے 57فیصد ضلعی حکومتوں کے توسط سے ترقیاتی کاموں پر خرچ کرے۔ یہ شیڈو بجٹ ہفتہ کو سندھ اسمبلی میں ایم کیو ایم کے پارلیمانی لیڈر سید سردار احمد اور اپوزیشن لیڈر خواجہ اظہارالحسن نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے پیش کیا۔اس موقع پر ارکان سندھ اسمبلی بھی موجود تھے۔ سید سردار احمد نے حکومت سندھ سے مطالبہ کیا کہ صوبے میں فوری بلدیاتی انتخابات کروائے جائیں اور نئے مالی سال کے بجٹ میں انتخابات کرانے کے لیے رقم مختص کی جائے۔