پاکستان نے تیسرے پلوٹونیم ری ایکٹر سے پیداوار کا آغاز کر دیا:امریکی رپورٹ میں دعویٰ

کراچی (اے پی اے) امریکی دفاعی ویب سائٹ’’ڈیفنس نیوز‘‘ نے جوہری مواد پر برطانوی تھنک ٹینک انٹرنیشنل پینل(IPFM) کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ خوشاب کے مقام پر پاکستان کے تیسرے پلوٹونیم ری ایکٹر نے اپنی پیداوار کا آغاز کردیا ہے اور امکان ظاہر کیا ہے کہ پہلے سے ہی ایندھن کی پیداوارجاری ہے۔ مارچ اور دسمبر2013 کی سیٹلائیٹ تصاویر استعمال کرتے ہوئے کہاگیا کہ خوشاب ری ایکٹر اب آپریشنل ہو چکا ہے کیونکہ اس کے کولنگ ٹاورزسے پانی کے بخارات اڑتے دکھائی دیتے ہیں۔لیکن خوشاب فور ری ایکٹر اب زیر تعمیر ہے۔ اگرخوشاب تھری نے 2013ء کے اوائل میں کام شروع کردیا تھا تو ایندھن کی پہلی کھیپ پہلے ہی باہر لائی جا چکی جسے ٹھنڈا کیا جاچکا ہے۔2014یا ممکنہ طور پر 2015 ء میں ری پراسیس کیلئے یہ دستیاب ہو گا۔یہ تمام رپورٹیںاسسمنٹ کی بنیاد پر بتائی گئیں کہ تین آپریٹنگ ری ایکٹرز کی پاورز40سے50میگاواٹ ہے۔اس صورت میں جب آپریٹنگ صلاحیت50فی صد ہو تو اس وقت ہر ری ایکٹر سالانہ5.7 سے7.1کلوگرام ہتھیار بنانے والی پلوٹینم پیدا کرسکتا ہے۔80 فیصد صلاحیت پر ہر ایک ری ایکٹر سے9سے11.5کلوگرام پلوٹینم پیداکی جاسکتی ہے۔اس بنیاد پر تھنک ٹینک IPFM دعویٰ کرتا ہے کہ خوشاب کے ری ایکٹر ون اور ٹو سے 170 کلو گرام پلوٹونیم جمع ہے۔ یہ دعویٰ کیا گیا کہ4 سے 5 کلو گرام پلوٹونیم سے ایک وار ہیڈ بنایا جاسکتا ہے۔اس لحاظ سے دونوں ری ایکٹر کا پلوٹینم تقریباً 35سے40 ایٹمی اثاثوں کے لئے کافی ہو گا۔رائل یونائیٹڈ سروسز انسٹی ٹیوٹ کے تجزیہ کار ششانک جوشی کہتے ہیںکہ سیٹلائٹ تصاویر کی بنیاد پر پیداوار کی صلاحیتوں کے اعداد و شمار کا تجزیہ کرنے میں بہت زیادہ احیتاط کی ضرورت ہے۔پاکستان کے قومی ڈیٹرینس کے ماہر منصور احمد کا کہنا  تھا کہ ان رپورٹس سے یہ ثابت کرنے کی کوشش کی گئی ہے کہ پاکستان جوہری ہتھیاروں میں تیزی سے اضافہ کررہا ہے  لیکن یہ بات یقینی ہے کہ پاکستان بھارت کے مقابلے میں اس سلسلے میں سست ہے۔ بھارت کے پاس دنیا کا تیز ترین جوہری پروگرام ہے ان میں غیر معمولی جوہری مواد کا پلانٹ، دوسرا پلوٹینم ری ایکٹر، ایک پانچ سو میگاواٹ کا بجلی کا تجرباتی فاسٹ بریڈر ری ایکٹر،سالانہ 350تھرمل پیداوارکے چار ری پراسیسنگ پلانٹس آپریشنل ہیں، اس کے علاوہ سالانہ500تھرمل کا ری پراسیسنگ پلانٹ اور ایک صنعتی سکیل کا سینٹری فیوز پلانٹ زیر تعمیر ہے۔2020تک بھارت مزید فاسٹ بریڈر ری ایکٹر بھی بنائے گا۔
امریکی رپورٹ