سراج درانی‘ وسان اور پیر مظہر الحق کرپٹ ترین افراد ہیں: ذوالفقار مرزا

کراچی (نوائے وقت رپورٹ + اے پی اے) سابق وزیر داخلہ سندھ ذوالفقار مرزا نے کہا ہے کہ کمشنری نظام بحال ہونے پر سندھ کے عوام کو ان کی اخلاقی فتح پر مبارکباد دیتا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو نصیحت کرتا ہوں کہ اب کمشنری نظام کی جگہ کوئی عبوری نظام لانے کی کوشش نہ کرے۔ پیپلز پارٹی کی حکومت عوام کی آواز سننے کی کوشش کرے۔ وہ نجی ٹی وی کے پروگرام میں بات چیت کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ میں اس وقت سکھر میں بیٹھا ہوں اور ملین مارچ کی تیاری کر رہا ہوں۔ بلدیاتی نظام کے تحت کروڑوں کی کرپشن کی گئی‘ بلدیاتی نظام کی کرپشن نے ہماری جڑوں کو کھوکھلا کر دیا ہے۔ متحدہ قومی موومنٹ شارٹ کٹ چاہتی ہے۔ بابر غوری ایم کیو ایم کے کرپٹ ترین وزیر ہیں۔ بلدیاتی نظام سے کرپشن ہمارے سیاسی نظام تک پہنچ گئی ہے۔ سب سے کرپٹ آدمی آغا سراج درانی ہے۔ منظور وسان اور پیر مظہر الحق بھی کرپٹ ترین آدمی ہیں۔ رحمن ملک بھاگنے میں تیز ہیں لگتا ہے کہ وہ پاکستان میں نہیں رہیں گے۔ زاہد بھرگڑی بھی کرپٹ ترین آدمی ہیں۔ آج خوشی کا دن ہے‘ کل حیدرآباد قاسم آباد میں جلسہ کروں گا۔ دعوت دیتا ہوں کہ میرے خلاف کرپشن کے جتنے کیس ہیں لے کر جلسہ میں آئیں۔ اغوا اور پیسہ لینے کی بات تو ہر کوئی کر دیتا ہے میرے سامنے ثبوت لے کر آئیں میں جلسہ کروں گا ہمت ہے تو جلسہ میں آئیں۔ذوالفقار مرزا نے کہا کہ میں سچ بول چکا ہوں۔ منظور وسان کو بھی سچ بولنا چاہئے۔ منظور وسان چور اور بھگوڑے ہیں تو منظور وسان کے ساتھ بہت سی باتیں کرتا تھا کسی سے پیسے لینا اور اغوا کرنا آسان بات نہیں ہے۔