کراچی میں ٹارگٹ کلنگ جاری‘ مفتی ندیم سمیت مزید 14 افراد جاں بحق

کراچی میں ٹارگٹ کلنگ جاری‘ مفتی ندیم سمیت مزید 14 افراد جاں بحق

کراچی (آئی این پی+ نوائے وقت رپورٹ) کراچی میں کشیدگی جاری، فائرنگ اورپرتشدد واقعات میں مفتی سمیت مزید 14 افراد کو موت کے گھاٹ اتار دیا گیا۔ دو ماہ میں قتل ہونے والے افراد کی تعداد 460 تک پہنچ گئی ہے۔ حسن میانوالی میں ایک گھر میں فائرنگ سے خاتون سمیت 3 افراد جاں بحق اور 2 زخمی ہو گئے۔ پولیس کے مطابق ہلاک ہونے والے برکت اور عمران دونوں ڈاکو ہیں۔ اورنگی ٹاو¿ن میں نامعلوم موٹر سائیکل سواروں نے فائرنگ کر دی جس میں سے 2 موقع پر ہلاک جبکہ 3 زخمی ہوگئے۔ شاہ فیصل کالونی میں فائرنگ سے ندیم نامی شخص جاں بحق ہو گیا ہے۔ مقتول مفتی اور مدرسہ کا معلم تھا۔ جنوبی علاقے مشرف کالونی میں بس سٹاپ پر فائرنگ سے ایک شخص موقع پر دم توڑ گیا جبکہ ماڑی پور میں قبرستان کے قریب سے ایک شخص کی نعش بھی برآمد ہوئی ہے۔ قبل ازیں مواچھ گوٹھ میں بھی فائرنگ کرکے 2 افراد کی زندگی کا خاتمہ کردیا گیا۔ لیاقت آباد میں فائرنگ سے نامعلوم شخص مارا گیا۔ عزیز بھٹی تھانے کی حدود میں رات گئے ایک شخص کی نعش ملی۔ اسی دوران ریلوے سوسائٹی کے قریب ایک تشدد زدہ شخص شدید زخمی حالت میں ملا۔ سرجانی کے علاقے میں پولیس نے مقابلے کے بعد 4 ملزمان کو گرفتار کر کے اسلحہ برآمد کر لیا۔ واقعات کے مطابق کراچی کے علاقے کٹی پہاڑی کے قریب نامعلوم مسلح افراد نے فائرنگ کر کے ڈاکٹر ساجد حسین کو ہلاک کر دیا۔ کراچی میں سکیورٹی فورسز کے جاری کردہ مراسلے میں کہا گیا ہے کہ کالعدم تحریک طالبان پاکستان، لشکر جھنگوی اور جیش محمد کی جانب سے شہر میں ممکنہ دہشت گردی اور تخریب کاری کے خطرات ہیں جبکہ بازاروں، دکانوں اور اہم مقامات اور پولیس افسران کو نشانہ بنایا جا سکتا ہے۔ مراسلے میں پولیس کے دو افسران چوہدری اسلم اور راجہ عمر خطاب پر حملے کا خدشہ ظاہر کیا گیا ہے۔