یمن جنگ ہماری نہیں، حکومتی رٹ تسلیم کرنے والے طالبان سے بات ہو سکتی ہے: اسفند یار

یمن جنگ ہماری نہیں، حکومتی رٹ تسلیم کرنے والے طالبان سے بات ہو سکتی ہے: اسفند یار

کراچی ( سٹاف رپورٹر) عوامی نیشنل پارٹی کے سربراہ اسفند یار ولی خان نے کہا ہے سعودی عرب کی سرزمین اور مقامات مقدسہ کا تحفظ ہر مسلمان کا فرض ہے۔ اس کے لئے نہ صرف فوج بلکہ میں خود بھی جانے کے لئے تیار ہوں تاہم یمن کی جنگ ہماری جنگ نہیں فرد واحد فیصلہ کرنے کی بجائے آل پارٹیز کانفرنس اور پارلیمنٹ کے ذریعے فیصلہ کرایا جائے ۔کسی سیاسی جماعت کو بغیر کسی گناہ کے دیوار سے نہ لگایا جائے۔ صولت مرزا کے بیان کی کوئی قانونی حیثیت نہیں مگر الزامات سنگین ہیں، شفاف ترین تحقیقات ایم کیو ایم کے اپنے مفاد میں ہے۔ خیبر پی کے میں عمران خان نے نہیں حکیم اللہ محسود نے کلین بولڈ کیا۔ ضرب عضب کے ذریعے انتہا پسندوں کا مکمل خاتمہ ممکن نہیں یہ قوم کرسکتی ہے ۔ حکومتی رٹ تسلیم کرنے والے طالبان سے بات ہوسکتی ہے۔ عمران خان نے کون سا نیا خیبرپی کے بنایا ہے یہ ایک سوالیہ نشان ہے ۔کے پی کے کا بلدیاتی نظام بھی سوالیہ نشان ہے ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے مردان ہاؤس میں عوامی نیشنل پارٹی سندھ کونسل کے اجلاس کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ انہوں نے کہا گزشتہ روز بلاول ہاؤس میں مختلف سیاسی جماعتیں جمع ہوئیں اور اس پر سب نے اتفاق کیا  پرائی جنگ میں ہمیں ملوث نہیں ہونا چاہئے۔ ماضی میں ایک فردواحد نے فیصلہ کیا اور قوم آج اس کا خمیازہ بھگت رہی ہے اور آج بھی ایک فرد واحد فیصلہ کرنے جارہا ہے۔ اس تنازعے کے معاملے میں قومی پالیسی بنانے کی ضرورت ہے ۔ ہم اس جنگ کا حصہ بن گئے تو ہمارے بلوچستان میں حالات بہت زیادہ خراب ہوں گے تاہم انہوں نے یہ وضاحت کرنے سے گریز کیا کہ یمن کی جنگ کے اثرات بلوچستان میں کیوں مرتب ہوں گے ۔