سندھ میں سیلاب کی تباہ کاریاں، سپریم کورٹ نے وفاق، صوبوں سے رپورٹس طلب کر لی

سندھ میں سیلاب کی تباہ کاریاں، سپریم کورٹ نے وفاق، صوبوں سے رپورٹس طلب کر لی

اسلام آباد (آن لائن) سپریم کورٹ نے سیلاب کی وجہ سے ہونے والی تباہ کاریوں ، سندھ میں سڑکوں کی حالت زار سمیت دیگر معاملات اور اقدامات کے بارے میں وفاقی حکومت اور صوبوں سے جون تک رپورٹس مانگ لی ہیں۔ جسٹس شیخ عظمت سعید نے بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کی چیئرپرسن ماروی میمن سے مخاطب ہو کر کہا ہے کہ آپ حکومت میں ہیں اس لئے سب اچھا ہو گیا ہے آگے مون سون کا موسم آ رہا ہے اس کی ذمہ داری کون لے گا ۔ عدالت آپ کے کہنے پر اب مقدمہ نہیں نمٹا سکتی ۔ سندھ میں دریائوں پر تجاوزات کی وجہ سے کافی جانی و مالی نقصان ہوا ہے ۔ بتایا جائے کہ آئندہ کے لئے کیا ممکنہ اقدامات اختیار کئے جا رہے ہیں۔ جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں 3 رکنی بنچ نے کسی کی سماعت کی۔ اس دوران ماروی میمن نے عدالت سے استدعا کی کہ تمام تر اعداد و شمار اکٹھے کر لئے گئے ہیں فلڈکمیشن کی رپورٹ اور سفارشات پر عملدرآمد کرا دیا گیا ہے۔ اب وہ کیس کی مزید سماعت نہیں چاہتیں جس پر عدالت نے درخواست نمٹانے سے انکار کر دیا اور کہا کہ آپ کے حکومت میں آنے سے سب اچھا ہو گیا ہے آج بھی لوگوں کو مسائل کا سامنا ہے جو جانی و مالی نقصان ہوا ہے اس کی ذمہ داری کون لے گا۔ اس کیس کی سماعت کریں گے اور جون میں اس کا فیصلے بھی دیں گے۔ عدالت نے بعدازاں وفاق اور صوبوں سے ممکنہ اقدامات کے بارے میں رپورٹس طلب کر لیں اور سماعت جون تک ملتوی کر دی ہے۔