حکومت دہشت گردی میں ملوث مدارس کی نشاندہی کرے: حنیف جالندھری

کراچی (نیوزرپورٹر) سانحہ پشاور درندگی اور انسانی تاریخ کا بدترین المیہ ہے۔ علماء نے پہلے بھی اس کی مذمت کی ہے اور اب بھی کرتے ہیں۔ سانحۂ پشاور کی آڑ میں کچھ ملک دشمن عناصر قوتیں مدارس اور حکومت میں ٹکراؤ کرانا چاہتی ہیں۔ ہم ملک کو بحران سے دوچار کرنا نہیں چاہتے۔ مزاحمت کی بجائے مذاکرات ومفاہمت پر یقین رکھتے ہیں۔ حکومت دہشت گردی میں ملوث مدارس کی نشاندہی کرے۔ عمومی طور پر تنقید کا نشانہ بنانا انصاف کے خلاف ہے۔ آئین اور قانون کے دائرے میں فوجی عدالتوں کے قیام کی حمایت کرتے ہیں لیکن ان عدالتوں میں ہر طرح کی دہشت گردی کا محاسبہ کیا جائے۔ وزیراعظم مدارس کے حوالے سے ایکشن پلان سے قبل اتحاد تنظیمات مدارس کی قیادت کو اعتماد میں لیں۔ حکومت کے ساتھ مذاکرات کے نتیجے میں طے پانے والے معاہدے سے ہٹ کر کوئی اقدام کرنے کی کوشش کی گئی تو اہل مدارس قبول نہیں کریںگے۔ ان خیالات کا اظہار وفاق المدارس العربیہ پاکستان کے ناظم اعلیٰ قاری محمد حنیف جالندھری اور مجلس شوریٰ کے رکن مفتی محمد نعیم نے گزشتہ روز کراچی پریس کلب میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ حنیف جالندھری نے کہا دہشت گردی کے خلاف سیاسی قوتوں کا اتحاد مثبت قدم ہے لیکن وزیراعظم کے قوم سے خطاب میں مدارس کی جانب اشارہ اس بات کا ثبوت ہے کہ بعض قوتیں انہیں درست معلومات فراہم نہیں کررہی ہیں۔