طالب علم کے قاتل پولیس اہلکاروں کو گرفتار کیا جائے‘ صارم برنی

طالب علم کے قاتل پولیس اہلکاروں کو گرفتار کیا جائے‘ صارم برنی

کراچی(اسٹاف رپورٹر) صارم برنی ویلفیئر ٹرسٹ انٹر نیشنل کی جانب سے پولیس اہلکاروں کے ہاتھوں ایک طالب علم یونس خان ولد امیر محمد کی ہلاکت پر تشویش کا اظہار کیا ہے اور اسے انسانی حقوق اور انسانیت کی سنگین خلاف ورزی قرار دیا ہے۔ ٹرسٹ کے ترجمان کو مقتول کے بھائی نے تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ یونس خان اپنے دوستوں کے ساتھ 5 ستمبر2013ءکو4:30 بجے شام اپنے گھر واپس آرہا تھا کہ راستے میں تھانہ سائٹ ایریا اے کی موبائل کے پولیس اہلکاروں نے یونس کو دوستوں سمیت پکڑ کر پولیس اسٹیشن لے آئی جب تھانے میں یونس اور اس کے دوستوں کو لایا گیا تو تلخ کلامی ہوگئی جس پر مقتول کے بھائی کے مطابق تھانے کے اہلکاروں نے اسے لاک اپ سے باہر نکال کر فائرنگ کرکے قتل کردیا۔ ٹرسٹ کے ترجمان کے مطابق پسماندگان نے مختلف جگہوں پر درخواستیں دیں اور اس سلسلے میں ایک درخواست ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج ویسٹ کی عدالت میں بھی دائر کی گئی جس پر عدالت نے مذکورہ تھانے کو ہدایات جاری کیں کہ وہ فوری ایف آئی آر درج کریں۔ لیکن تاحال اس واقعے کی ایف آئی آر درج نہیں کی گئی ہے اور نہ اہلکاروں کو گرفتار کیا گیا ہے۔ چنانچہ مرحوم کے لواحقین نے صارم برنی ٹرسٹ کے چیئرمین صارم برنی سے اپیل کی کہ وہ اس واقعے میں ہمیں انصاف دلوائیں جس پر صارم برنی نے طالب علم کے قتل کوکھلی دہشت گردی قرار دیا اور چیف جسٹس آف پاکستان اور چیف جسٹس آف سندھ ہائی کورٹ سے اپیل کی کہ وہ اس واقعے میں ملوث پولیس اہلکاروں کو سخت سزا دلوانے میں مدد کریں۔