آدھے دھرنے والوں سے نمٹ لیا باقی سے نمٹ لینگے:خواجہ آصف

اسلام آباد (آن لائن + اے پی پی) وفاقی وزیر پانی بجلی و دفاع خواجہ محمد آصف نے کہا ہے کہ  آپریشن ضرب عضب میں فوج کو بڑی کامیابیاں حاصل ہوئی ہیں، دہشت گردوں کے نیٹ ورک کا صفایا کر دیا گیا ہے، ملک بھر میں ان کا پیچھا کیا جائے گا۔ وزیراعظم 7 نومبر کو چین کا دورہ کریں گے، آدھے دھرنے والوں سے نمٹ لیا ہے، باقی  سے بھی نمٹ لیں گے، دھرنوں سے معیشت کو سنگین نقصان پہنچا ہے۔ آزاد عدلیہ آزاد صحافت اور مضبوط جمہوریت کے بعد غیر ملکی سرمایہ کاروں کو کسی قسم کے مسائل کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا، سرمایہ کاروں کو مراعات دینے کیلئے حکومت کسٹمز ڈیوٹی مکمل طور پر ختم کرنے پر غور کر رہی ہے، ایل این جی کے شعبے میں حکومت تیزی سے کام کر رہی ہے، فروری 2015ء سے اس کی باقاعدہ سپلائی بھی شروع ہو جائے گی۔ بین الاقوامی سرمایہ کاری کانفرنس کے دوسرے سیشن میں صدارتی خطاب اور بعدازاں میڈیا سے بات چیت  کرتے ہوئے خواجہ آصف نے کہا کہ ملک میں غیر ملکی سرمایہ کاری کیلئے بے پناہ مواقع موجود ہیں، حکومت غیر ملکی سرمایہ کاروں کو مختلف شعبوں خصوصاً توانائی کے شعبے میں سرمایہ کاری کی حوصلہ افزائی کرے گی۔ حکومت غیر ملکی سرمایہ کاروں کو پرکشش مراعات دے رہی ہے، توانائی کے شعبے میں کمی کا سامنا ہے  یہ کمی پوری کرنے کیلئے بھرپور اقدامات کر رہے ہیں۔ دہشت گردی میںکمی واقع ہونے سے بیرونی سرمایہ کار تیزی سے پاکستان کا رُخ کر رہے ہیں، توانائی کے شعبہ میں سرمایہ کاری کرنے والوں کیلئے پاکستان میں شمسی توانائی ہوائی بجلی پن بجلی اور کوئلے سے بجلی کی پیداوار سمیت دیگر منصوبے اور وسیع مواقع موجود ہیں۔  حکومت سردیوں میں بجلی کی کمی کو پورا کرنے کیلئے منصوبے پر کام کر رہی ہے جس میں مقامی مارکیٹوں کو رات کے 8 بجے تک بند کرنے اور دیگر اقدامات شامل ہیں۔ پاکستان وہ ملک ہے جہاں مارکیٹ رات گئے تک کھلی رہتی ہے اور یہاں دستیاب وسائل کے اندر رہتے ہوئے توانائی کی بچت کی عادت کو اختیار کرنے کی ضرورت ہے۔  پاکستان میں سرمایہ کاری کی بھرپور صلاحیتیں موجود ہیں جہاں طلب و رسد میں بڑا خلا ہے معلومات تک رسائی جیسے ضابطے موجود ہیں یہ بنیادی حق ہے کہ سرمایہ کاروں کے تحفظات کو دور کیا جائے احتسابی عمل یقینی بنانے کیلئے آزاد عدلیہ موجود ہے۔ نجکاری قواعد و ضوابط پر عملدرآمد  ملک میں توانائی بحران پر قابو پانے کا حتمی حل ہے۔ حکومت توانائی کے شعبہ کو تحفظ دینے کیلئے متعدد اقدامات اور سرمایہ کاری کے کلچر کو فروغ دینے کیلئے اداروں کے درمیان کاروباری سرگرمیوں کو پروان چڑھانے کیلئے کام کر رہی ہے۔