بھارتی جیلوں میں 469 پاکستانی قیدی ہیں‘ پسندیدہ قرار دینے کا فیصلہ نئی حکومت کریگی : سینٹ کمیٹی کو بریفنگ

اسلام آباد (ایجنسیاں) سیکرٹری تجارت منیر قریشی نے کہا ہے کہ بھارت کو تجارت کے لئے انتہائی پسندیدہ ملک قرار دینے کا حتمی فیصلہ نئی حکومت کرے گی۔ سیکرٹری خارجہ جلیل عباس جیلانی نے سینٹ کی قائمہ کمیٹی خارجہ امور کو پاک چین تعلقات پر بریفنگ دیتے ہوئے آگاہ کیا ہے کہ چین افغانستان کے معاملے پر پاکستانی موقف کا حامی ہے چینی قیادت پاکستان کو سٹرٹیجک اثاثہ تصور کرتی ہے اور اسے خوشحال اور مضبوط ملک دیکھنا چاہتی ہے ۔ تجارتی توازن کے لئے پاکستان کے ساتھ چالیس کروڑ ڈالر کے مختلف منصوبوں پر کام شروع کیا جائے گا ۔ قائمہ کمیٹی کو یہ بھی آگاہ کیا گیا ہے کہ بھارتی جیلوں میں قید پاکستانیوں کی شناخت کے بارے میں نئی دہلی کو خط لکھ دیا گیا ہے بھارت کو کہا گیا ہے کہ ان قیدیوں کے پاس پاکستانی دستاویزات کی موجودگی کے بارے میں آگاہ کریں ۔ قائمہ کمیٹی کو یہ بھی آگاہ کیا گیا ہے کہ پیپلزپارٹی کے حالیہ پانچ سالہ دور حکومت میں سیاسی بنیادوں پر 15 سفیر تعینات کئے گئے تھے ۔ ان میں 9 سابقہ فوجی افسران شامل ہیں ۔ سفراءکی تقرری کے حوالے سے فوج کا کوئی کوٹہ نہیں ہے قائمہ کمیٹی نے سیاسی بنیادوں پر سفیروں کی تقرری کے حکومتی کوٹے کو 20 فیصد سے کم کر 15 فیصد کرنے کی سفارش کر دی ہے۔ دفتر خارجہ کے حکام نے آگاہ کیا ہے کہ نئی حکومت آنے کے پیش نظر سیاسی بنیادوں پر تعینات سفیروں کو نوٹسسز جاری کر دیئے گئے ہیں ۔ سینٹ کی قائمہ کمیٹی خارجہ امور و کشمیر گلگت بلتستان کا اجلاس سینیٹر فرحت اللہ بابر کی صدارت میں ہوا۔ کمیٹی نے پاکستان کے سفارت خانوں اور مشنز میں کمرشل اتاشیوں کی تقرریوں میں بے ضابطگیوں کا نوٹس لیا تھا ۔ وزارت خارجہ اور وزارت تجارت کے حکام نے اس بارے میں کمیٹی کو بریفنگ دی اور دعوی کیا کہ تقرریاں میرٹ کے مطابق ہوئی ہیں اقرباءپروری سے کام نہیں لیا گیا۔ بھارتی جیلوں میں قید پاکستانی قیدیوں کے حوالے سے حکام نے بتایا کہ بھارتی جیلوں میں پاکستانی قیدیوں کی مجموعی تعداد 469 ہے۔ 197 پاکستانی قیدیوں تک بھارت رسائی نہیں دے رہا ہے۔ قیدیوں میں 146 ماہی گیر بھی شامل ہیں اور 30 ایسے پاکستانی بھی بھارتی جیلوں میں ہیں جو اپنی سزائیں پوری کر چکے ہیں۔ بھارت انہیں رہا نہیں کر رہا۔ سیکرٹری خارجہ جلیل عباس جیلانی نے بتایا کہ چینی وزیر اعظم لی کی چیانگ کا حالیہ دورہ پاکستان مفید رہا۔
بھارت / پسندیدہ