اٹھارہویں ترمیم پر عملدرآمد کمشن 30 جون کو تحلیل کابینہ کل کنکرنٹ لسٹ ختم کرنے کی منظوری دے گی

اسلام آباد (محمد نواز رضا+ وقائع نگار خصوصی) آئین میں 18 ویں ترمیم پر عملدرآمد کمشن 30 جون 2011ءکو اپنا کام مکمل کرکے خودبخود تحلیل ہو جائے گا‘ وفاقی کابینہ کل منگل 28 جون 2011ءکو کنکرنٹ لسٹ ختم کرنے کے آخری مرحلے کی منظوری دے گی۔ اس بات کا قوی امکان ہے کہ آئین میں 18 ویں ترمیم پر عملدرآمد کمشن آج اپنی سفارشات کو حتمی شکل دے کر اپنی رپورٹ وفاقی کابینہ کو بھجوا دے گا۔ اس طرح عملدرآمد کمشن کا کام مکمل ہو جائے گا۔ صوبائی خودمختاری کا عمل پایہ تکمیل کو پہنچنے سے وفاق کی 17 وزارتیں اور کچھ ملحقہ محکمے صوبوں کو منتقل ہو جائیں گی۔ عملدرآمد کمشن کی طرف سے وفاقی کابینہ کو یکم جولائی 2011 کو صوبائی خودمختاری کا یوم بنانے کی تجویز بھجوائی جا رہی ہے اگر وفاقی کابینہ نے اس تجویز کی منظوری دے دی تو یکم جولائی 2011ءکو صوبائی خودمختاری کا یوم منایا جائے گا۔ 1973ءکے آئین کی منظوری کے وقت اس وقت کے وزیراعظم ذوالفقار علی بھٹو نے قوم پرست جماعتوں سے آئندہ 10سال میں کنکرنٹ لسٹ ختم کرنے کا وعدہ کیا جو کم و بیش 34سال بعد موجودہ پارلیمنٹ نے پورا کر دکھایا۔ وزارت کھیل، ماحولیات، ترقی نسواں، محنت و افرادی قوت، صحت، خوراک و زراعت اور اقلیتی امور صوبوں کو منتقل کی جا رہی ہیں تاہم حکومت کو ہائرایجوکشن کمشن، قومی کمشن برائے انسانی ترقی، ورکرز ویلفیئر فنڈ، ای او بی آئی، صحت کی قومی پالیسی کی اتھارٹی اور صنعتی تعلقات کمشن کے بارے میں قانون سازی کی جائے گی ۔30جون 2011ءکو 17وزارتوں کی صوبوں کو منتقلی کے بعد قومی اسمبلی اور سینٹ سے مزید 13مجلس قائمہ ختم ہو جائیں گی۔ قومی اسمبلی کی 5اور سینٹ کی 6 مجالس قائمہ کے چیئرمین سبکدوش ہو جائیں گے ان سے سرکاری سہولیات واپس لے لی جائیں گی۔
کنکرنٹ لسٹ ختم منظوری