جنوبی ایشیا کی تمام خواتین کو اپنے حقوق کیلئے متحد ہو کر کام کرنا ہوگا: فہمیدہ مرزا

-اسلام آباد (لیڈی رپورٹر) سپیکر قومی اسمبلی ڈاکٹر فہمیدہ مرزا نے کہا ہے کہ اگر خواتین پارلیمنٹرین کاکس کے تحت خواتین کے اہم مسائل اجاگر کرتی رہیں تو اسکے جلد مثبت ثمرات سامنے آجائینگے تاہم جنوبی ایشیا کی تمام خواتین کو اپنے خلاف اٹھنے والے رویوں کیخلاف یک زبان ہو کر آواز اٹھانا ہوگی۔ منگل کو فہمیدہ مرزا خواتین پارلیمنٹرین کے دو روزہ عالمی کنونشن سے خطاب کررہی تھیں جس میں چاروں صوبائی اور قومی اسمبلی کی خواتین اراکین، گلگت بلتستان کی نمائندہ خواتین، سارک ممالک کی خواتین سمیت سول سوسائٹی کی سرگرم کارکنوں نے شرکت کی۔ سپیکر قومی اسمبلی نے کہا کہ حکومت خواتین کو بااختیار بنانے کیلئے پرعزم ہے ۔جس کا ثبوت آج وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی کا ہمارے ساتھ ہونا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بے نظیر بھٹو شہید مسلم دنیا کی پہلی خاتون وزیراعظم تھیں جنہوں نے خواتین کو تحفظ فراہم کرنے کیلئے اپنی پوری زندگی وقف کردی۔ انہوں نے کہا کہ خواتین اراکین اسمبلی قانون سازی میں ایک اہم کردار ادا کررہی ہیں۔ خواتین کی شرکت کے بغیر قانون سازی ناقابل قبول اور نامکمل ہوتی ہے۔ ویمن پارلیمنٹری کاکس کی سیکرٹری نفیسہ شاہ نے بیرونی ممالک سے آنیوالی خواتین شخصیات کو خوش آمدید کہتے ہوئے کہا کہ کنونشن میں خواتین کی اکثریت سے یہ بات ثابت ہورہی ہے کہ وہ اپنے حقوق حاصل کرنے کیلئے متحد ہیں۔ آج ہم دیگر ممالک کی خواتین کیلئے اپنے مسائل پر بات کرکے ان کے تجربات سے فائدہ اٹھائینگے۔ بے نظیر بھٹو شہید نے 1995ءمیں ویمن پارلیمنٹیرینز کانفرنس منعقد کروائی تھی۔ و خواتین کو معاشی اعتبار سے مضبوط و مستحکم دیکھنا چاہتی تھیں۔ انہوں نے کہا کہ خواتین کیخلاف امتیازی سلوک کے خاتمہ کیلئے تمام خواتین کو ملکر کام کرنا ہوگا۔ کاکس میں تمام اراکین سیاسی پارٹیوں کی وابستگیوں سے بالاتر ہو کر کام کررہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گردی کے خاتمہ کیلئے جاری آپریشن میں خواتین او بچے سب سے زیادہ متاثر ہوئے۔ خواتین کو ان کی شناخت دینے کی ضرورت ہے۔ ہیومن رائٹس کمیشن آف پاکستان کی چیئرپرسن عاصمہ جہانگیر نے کہا کہ سیاست میں خواتین کی شمولیت بہت ضروری ہے۔ خواتین کو ایسا ماحول فراہم کیا جانا چاہئے تاکہ وہ اپنے تعمیری کردار میں اضافہ کرکے ملک کی ترقی نہ کرسکیں۔ انہوں نے کہا کہ جنوبی ایشیا کی خواتین کو خطہ میں امن قائم کرنے کیلئے اپنا کردار ادا کرنا ہوگا۔ وفاقی وزیر مملکت برائے خارجہ امور نوابزادہ ملک عماد خان نے خارجہ پالیسی پر اپنا پالیسی بیان دیتے ہوئے کہا کہ حکومت نے دو سالوں میں خواتین کے حقوق کو تحفظ دینے کیلئے کئی اہم اقدامات کئے ہیں۔ خواتین کو قومی دھارے میں لایا جا رہا ہے اور انہیں اپنی صلاحیتوں کے جوہر دکھانے کیلئے مواقع فراہم کئے جا رہے ہیں۔ بے نظیر انکم سپورٹ شروع کیا گیا ہے تاکہ خواتین اپنے پاﺅں پر کھڑی ہوسکیں۔ پاکستان کا مستقبل تابناک ہے۔