چیف جسٹس لاپتہ افراد کیس کو اہمیت دیتے ہوئے انصاف فراہم کریں: آمنہ مسعود

اسلام آباد (نیوز ایجنسیاں) ڈیفنس آف ہیومن رائٹس کی چیئرپرسن آمنہ مسعود جنجوعہ نے لاپتہ افراد کی بازیابی کےلئے بنائے جانے والے حکومتی کمشن پر عدم اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے چیف جسٹس آف پاکستان سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ این آر او اور دیگر سیاسی کیسوں کی طرح لاپتہ افراد کے کیس کو اہمیت دیتے ہوئے ان کے خاندانوں کو انصاف فراہم کریں لاپتہ افراد کی بازیابی تک تحریک جاری رہے گی اور 27مئی سے بنک روڈ راولپنڈی پر بھوک ہڑتالی کیمپ لگایا جائے گا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گذشتہ روز لاپتہ افراد کے لواحقین کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ آمنہ مسعود جنجوعہ نے کہا کہ ایک طرف حکومت نے لاپتہ افراد کی بازیابی کےلئے کمشن تشکیل دے رکھا ہے اور دوسری طرف روزانہ کی بنیاد پر لوگوں کو گھروں سے اٹھا کر غائب کیا جا رہا ہے نہ تو کسی کو اس کا جرم بتایا جاتا ہے اور نہ ہی گرفتار شدگان کو کسی عدالت مےں پیش کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کمشن بننے کے بعد حکومت نے یقین دہانی کرائی تھی کہ اب کسی شخص کو غیر قانونی طور پر نہیں اٹھایا جائے گا مگر گذشتہ دو ماہ کے دوران پچاس سے زائد افراد کو اٹھایا گیا ہے جبکہ رانا اشرف نے کہا ہے کہ اگر سلیمان، رضا خان اور شاہد حسین کا فیصل شہزاد سے تعلق ہے تو انہیں ضرور سزا دیں ورنہ رہا کیا جائے۔