طاہر القادری کی آمد، پولیس اور سکیورٹی اداروں نے وزیر داخلہ کی طے کردہ حکمت عملی پر عمل کیا

طاہر القادری کی  آمد، پولیس اور سکیورٹی اداروں نے وزیر داخلہ کی طے کردہ حکمت عملی پر عمل کیا

 اسلام آباد (آئی این پی) پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری کی دبئی سے اسلام آباد آمد کے موقع پر پولیس اور سکیورٹی اداروں نے وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان کی طے کردہ حکمت عملی پر عمل در آمد کیا جس کے نتیجہ میں بے نظیر بھٹو انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر ماڈل ٹائون لاہور میں کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش نہ آ سکا، وزیر داخلہ کی ہدایت پر پولیس اہلکاروں سے اسلحہ واپس لے لیا گیا تھا انہیں صرف لاٹھی چارج اور آنسو گیس کے شیل استعمال کرنے کی اجازت تھی، اسلحہ صرف پولیس افسران کے پاس تھا تاہم پولیس افسران کو بھی عوامی تحریک کے مشتعل کارکنوں پر فائرنگ کرنے کا اختیار نہیں دیاگیا  تھا، وزیر داخلہ خود ساری صورتحال کو لمحہ بہ لمحہ مانیٹر کرتے رہے۔ پیر کو وزارت داخلہ کے ذرائع کے مطابق وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے گزشتہ روز وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف سے مل کر علامہ طاہر القادری کی وطن واپسی پر فول پروف سکیورٹی فراہم کرنے اور شرپسند عناصر کے عزائم ناکام بنانے کے لئے ایک جامع حکمت عملی تیار کی ، جس کی روشنی میں پولیس افسران کو خصوصی ہدایات جاری کی گئی تھیں کہ ایئرپورٹ کے اندر کوئی کارکن داخل نہ ہو سکے اور کارکنوں پر نہ تو پولیس تشدد کرے گی اور نہ ہی مشتعل ہونے والے مظاہرین پر فائرنگ کی جائے گی۔ کرال چوک پر پولیس اور عوامی تحریک کے کارکنوں میں کئی گھنٹے تک جھڑپ جاری رہی اور پتھرائو ہوتا رہا، اس دوران پولیس افسران نے اہلکاروں کو صبر و تحمل سے کام لینے کی ہدایت دی۔
وزیرداخلہ  کی حکمت عملی