”را“ شدت پسندوں کو بطور کرایہ کے قاتل استعمال کر رہی ہے‘ بلیک واٹر کا وجود نہیں: رحمن ملک

اسلام آباد (آن لائن/ اے پی پی/ مانیٹرنگ نیوز) وفاقی وزیر داخلہ رحمان ملک نے بھارت پر الزام عائد کیا ہے کہ ”را“ اسلامی شدت پسندوں کو دہشتگردی کی کارروائیوں کیلئے کرائے کے قاتل کے طور پر استعمال کررہی ہے، بھارت مذاکرات کی ٹیبل سے بھاگ رہا ہے، سوات میں کوئی جوڈیشل کلنگ نہیں ہو رہی، کراچی سمیت دہشتگردی کے اہم واقعات کے ماسٹر مائنڈ تک پہنچ چکے ہیں، ہنگو میں ایف سی کا اہلکار دہشتگردی کے الزام میں گرفتار کیا گیا ہے، پاکستان میں بلیک واٹر کا کوئی وجود نہیں جبکہ پاکستان غیر مستحکم ہوا تو پورا خطہ غیر مستحکم ہوجائے گا۔ اس امر کا اظہار انہوں نے ہفتے کو اسلام آباد میں چین سے درآمد کئے جانے والے دو نئے سکیورٹی سکینرز کی تنصیب کی تقریب سے خطاب اور بعد ازاں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ رحمان ملک نے کہا کہ سکیورٹی سکینرز کی فراہمی پاک چین دوستی کا عکس ہے جبکہ پاکستانی سکیورٹی اداروں کے استعداد کار میں اضافے کیلئے چین پاکستان کی اہم مدد کررہا ہے‘ دوسرے مرحلے میں چاروں صوبائی دارالحکومتوں میں سکیورٹی سکینرز نصب کرکے انہیں سیف سٹی بنایا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے بھارت سے حافظ سعید کیخلاف شواہد مانگے تھے جس پر بھارت نے کوئی جواب نہیں دیا جبکہ وہ بھارتی ہم منصب کو اقوام متحدہ میں مناظرے کی دعوت دیتے ہیں‘ بلیک واٹر نامی کوئی تنظیم کام کررہی ہے نہ ہی بلیک واٹر نے کبھی پاکستان میں کام کرنے کی اجازت مانگی‘ عوام سے اپیل ہے کہ بلیک واٹر کی موجودگی کے حوالے سے شواہد کے ساتھ معلومات فوری طور پر ہمیں دی جائیں جس پر فوری طورپر کارروائی کی جائیگی‘ افواہیں نہ پھیلائی جائیں۔ وزیر داخلہ نے مزید کہا کہ امریکہ میں مسلمانوں کی سکیننگ توہین ہے‘ پاکستانیوں کی سکیننگ کے معاملے پر سنجیدہ کارروائی کریں گے‘ موبائل سکینرز تین سے چار کلو میٹر تک دھماکہ خیز مواد کو سکین کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ ایک نجی ٹی وی کے مطابق انہوں نے کہا بھارت کو دہشت گرد حملے روکنے کی ضمانت نہیں دے سکتے۔