ایل این جی کی درآمد شفاف ہو گی، پارلیمنٹ اور عوام کو جوابدہ ہیں: وزیر پٹرولیم

ایل این جی کی درآمد شفاف ہو گی، پارلیمنٹ اور عوام کو جوابدہ ہیں: وزیر پٹرولیم

اسلام آباد (آئی این پی) وفاقی وزیر پٹرولیم و قدرتی وسائل شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ ایل این جی کی درآمد مکمل طور پر شفاف طریقے سے ہو گی‘ ٹرانسپرنسی انٹرنیشنل کو نہیں بلکہ پارلیمنٹ اور عوام کو جواب دہ ہیں‘  قطر سے ایل این جی کی خریداری کا معاملہ حکومتی سطح پر جاری ہے‘ فاٹا میں تیل و گیس کی تلاش کے راستے میں سکیورٹی کی صورتحال رکاوٹ نہیں‘ موجودہ حکومت کے دوران تیل و گیس کی پیداوار میں اضافہ کیلئے 78 کنوئیں کھودے گئے جبکہ 20 کامیاب ہوئے جس کے نتیجے میں تیل  کی پیداوار 93600 بیرل یومیہ  سے بڑھ گئی ہے۔ وہ یہاں جمعہ کو تیل و گیس کی تلاش کیلئے 15 نئے بلاکوں کے لائسنس او جی ڈی سی ایل کو جاری کرنے اور معاہدے پر دستخطوں کی تقریب سے خطاب اور بعد ازاں صحافیوں سے گفتگو کر رہے تھے۔  انہوں نے کہا کہ وزارت پٹرولیم و قدرتی وسائل نے قبل اس کے 21 جنوری 2014ء کو 9 آئل اینڈ گیس کمپنیوں کو تیل اور گیس تلاش کرنے کیلئے 50 بلاکوں کے  28لائسنس جاری کئے جن میں صوبہ بلوچستان میں 21 بلاک‘ صوبہ سندھ میں 6 بلاک ‘ صوبہ پنجاب میں 15 بلاک جبکہ  صوبہ خیبر پی کے میں 8 بلاک موجود ہیں۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت نے  آتے ہی ملک میں تیل و گیس کی تلاش کا کام تیز کر دیا ہے۔ قبل ازیں وزارت پٹرولیم اور او جی ڈی سی ایل کے نمائندوں نے تیل و گیس کی تلاش کیلئے 15 نئے بلاکوں   کے لائسنس او جی ڈی سی ایل کوجاری کرنے اور تیل و گیس کی تلاش کے معاہدے پر دستخط کئے۔ وزارت پٹرولیم کی جانب سے معاہدے پر سیکرٹری پٹرولیم  عا بد سعید جبکہ او جی ڈی سی ایل کی جانب سے قائمقام ایم ڈی ریاض خان نے دستخط کئے۔ وزیر مملکت بر ائے پٹرولیم و قدرتی وسائل جام کمال خان اور مشیر وزارت پٹرولیم زاہد مظفر بھی اس موقع پر موجود تھے۔