وزیراعظم استعفیٰ کیوں دیں‘ اب تماشا بند ہونا چاہئے: مریم اورنگزیب

وزیراعظم استعفیٰ کیوں دیں‘ اب تماشا بند ہونا چاہئے: مریم اورنگزیب

اسلام آباد (نمائندہ نوائے وقت+ وقائع نگار خصوصی) وفاقی وزراء و مسلم لیگ (ن) کے رہنمائوں نے پانامہ فیصلے پرکہا ہے کہ عمران خان اب جلنا اور رونا بند کردیں‘ اب بھی وقت ہے خدا کے لیے خیبر پی کے جائیں اور وہاں کے لوگوں سے لیے ووٹ کا حق ادا کریں۔ عدالت عظمیٰ کے باہر میڈیا سے بات کرتے ہوئے وزیردفاع خواجہ آصف نے کہا عدالت عظمیٰ نے اکثریت کے ساتھ فیصلہ دیا ہے۔ آج یہ بات ثابت ہوگئی جو شہادتیں ہمارے مخالفین نے پیش کیں‘ وہ ناکافی تھیں۔ اللہ تعالی نے ہمیں اپنے دربار میں اور عوام کے سامنے سرخرو کیا ہے جس پر ہم شکر گزار ہیں۔ ہم سرخرو ہوئے۔ وفاقی وزیر منصوبہ بندی احسن اقبال نیکہا تھا کہ آج تاریخی کامیابی حاصل ہوئی ‘ وہ ناکام سیاستدان جنہوں نے پہلے دھرنے کے ذریعے عوام کے مینڈیٹ پر شب وخون مارنے کی کوشش کی اور ناکام ہوئے، پے درپے عوام کی عدالت میں شکست کھانے کے بعد انہوں نے عدالت کے ذریعے عوام کے مینڈیٹ پر شب و خون مارنے اور وزیر اعظم کو ہٹانے کے لیے چور دروازہ استعمال کرنے کی کوشش کی‘ لیکن سپریم کورٹ نے اس سازش کو ناکام بنادیا ہے۔ وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے کہا ایک بار پھر نوازشریف ان کی ٹیم، مسلم لیگ(ن)، ہمارے کروڑوں ووٹرز اور ہر وہ پاکستانی جس کو جمہوریت سے پیار ہے سرخرو ہوا ہے۔2018ء میں عوامی عدالت لگے گی۔ مسلم لیگ(ن) نوازشریف کی قیادت میں چاروں صوبوں میں حکومت بنائے گی ۔ وزیرمملکت اطلاعات و نشریات مریم اورنگزیب، وزیر مملکت برائے کیڈ ڈاکٹر طارق فضل چودھری اور قومی اسمبلی کے رکن طلال چودھری نے کہا ہے سازشی ٹولے کی مذموم سازشوں کا جنازہ نکل گیا۔ پانامہ لیکس کے فیصلہ کے بعد سپریم کورٹ کے باہر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے مریم اورنگزیب نے کہا پارٹی کارکنوں اور عوام کا شکریہ ادا کرتے ہیں۔ پارٹی کارکنوں نے ملک میں انتشار نہیں ہونے دیا۔ اب تماشہ بند کرکے تمام سیاسی جماعتوں کو جے آئی ٹی پر اعتماد کرنا چاہیے۔ عدالتی فیصلے پر اللہ کے شکرگزار ہیں۔ جھوٹے الزامات لگانے والوں نے ہر طرح کے منفی حربے اور انتشاری سیاست کی۔ وزیراعظم استعفیٰ کیوں دیں‘ ان کا میڈیٹ پاکستان کے عوام کی امانت ہے۔ طارق فضل چودھری نے کہا سازشی ٹولے کی مذموم سازشوں کا جنازہ نکلا ہے۔ عدالت نے ثابت کیا نوازشریف صادق اور امین ہیں۔ طلال چودھری نے کہاکہ آج سچ کا بول بالا اور جھوٹ کا منہ کالا ہوا۔ محمد نوازشریف آئندہ 6 سال تک وزیراعظم رہیں گے۔ نوائے وقت رپورٹ کے مطابق وزیر ریلوے سعد رفیق نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا سیاسی مخالفین کو منہ کی کھانا پڑی۔ وزیراعظم کا خواب دیکھنا یا خواہش کرنا گناہ نہیں۔ جمہوریت کو ڈی ریل اور پاگلوں جیسی حرکتیں کرنا نامناسب ہے۔آصف زرداری توہین عدالت کے مرتکب ہوئے ہیں۔ آصف زرداری کا کھا کھا کر پیٹ ہی نہیں بھرتا۔ آصف زرداری مال بناؤ پروگرام چھوڑ دیتے تو ہمیں سندھ نہ جانا پڑتا۔ قوم آصف زرداری کو عدالتوں کا مذاق اڑانے کی اجازت نہیں دے گی۔ ہم کو پتہ ہے ان کو وزیراعظم کے دوروں کی تکلیف ہے۔ زرداری صاحب! عدالتی فیصلوں کو نہ مانا گیا تو ریاست جنگل بن جائے گی۔ نواز کے نام کے ساتھ شریف اور آپ کے نام کے ساتھ زر لگتا ہے۔ زرداری صاحب آپ کا کھاتہ ڈھکا ہے ڈھکا ہی رہنے دیں۔ زرداری صاحب آپ کو کام تو کوئی آتا نہیں، کم از کم کھانا ہی بند کر دیں۔ عمران خان کو چکوال میں عوامی فیصلے کو سمجھ لینا چاہئے۔ وزیراعظم استعفٰی کیوں دیں؟ عوام سے کئے گئے وعدے پورے کریں گے۔ اللہ تعالیٰ عمران خان کو ہدایت دے اور ان پر رحم کرے۔ دانیال عزیز نے کہا کہ حسن اور حسین نواز کے انٹرویو کو توڑ مروڑ کر پیش کیا جاتا رہا۔ انوکھے لاڈلے کی جو حرکتیں ہیں‘ انہیں کبھی شیروانی نہیں ملنی۔ فیصلے میں کہیں بھی مریم نواز کا نام شامل نہیں۔ وزیرمملکت پانی و بجلی عابد شیر علی نے کہا ہے کرپشن کا ایوارڈ کسی کو ملا تو وہ آصف زرداری کو ملے گا۔ تحریک انصاف نے گزشتہ آٹھ ماہ سے پاکستان کی سیاست میں جھوٹ کا طوفان برپا کر رکھا ہے۔ تحریک انصاف نوازشریف اور ملکی ترقی سے خائف ہے۔ سینٹ میں مسلم لیگ (ن) کے پارلیمانی لیڈر مشاہد اللہ خان نے کہا ہے عمران خان سپریم کورٹ کا فیصلہ سننے کے بعد حسرتوں پر آنسو بہا کر سو گئے ہیں۔ پارلیمنٹ ہائوس کے باہر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا آف شور کمپنیوں کی بنیاد پر پانامہ کا فیصلہ آیا تو عمران خان جہانگیر ترین سمیت دیگر ساتھیوں کے ساتھ جیل جائیں گے۔ سیاسی لوگ عدالتوں میں جنگیں نہیں لڑتے‘ میدان میں لڑتے ہیں۔ ہم نے ان کو دو دن قبل میدان میں شکست دی اور آج بھی شکست ان کا مقدر بن گئی ہے۔ جن کے مقدر میں ہی ذلت لکھی ہو وہ اس فیصلہ پر کیا ردعمل دے سکتے ہیں۔ جو شخص ایک ٹیچر کا بیٹا ہے‘ اس کے پاس اربوں روپے کہاں سے آئے۔ عمران خان کے اثاثے ایک ارب 32 کروڑ تک پہنچ گئے ہیں۔ ان سے کوئی پوچھنے والا ہے اتنا اضافہ کس طرح ہوا۔ این این آئی کے مطابق وفاقی وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی انوشہ رحمن نے کہا ہے عمران خان چور دروازے سے اقتدار میں آنا چاہتے تھے۔ ان کا اصل چہرہ عوام کے سامنے آگیا ہے۔ عابد شیر علی نے کہا ہے ’’’جا عمران اپنی حسرتوں پہ آنسو بہا کے سو جا‘ عمران تو اپنی نئی شیروانی سلا کے سو جا۔‘‘ وزیراعظم کے مشیر امیر مقام نے کہا ہے فیصلہ مسلم لیگ (ن) یا وزیراعظم محمد نوازشریف کی نہیں بلکہ پوری پاکستانی قوم کی فتح ہے۔ صباح نیوز کے مطابق وزیراعظم کے معاون خصوصی آصف کرمانی نے کہا ہے سپریم کورٹ کا فیصلہ نہ ماننے والوں کو شرم آنی چاہئے۔ آصف زرداری نے اعلیٰ عدلیہ کا فیصلہ نہ مان کر توہین عدالت کی۔ عمران خان کو (ن) لیگ نے سیاسی میدان میں بار بار شکست دی۔ اب قانون کی جنگ میں بھی شکست دے دی ہے۔ اسلام میں ریلی سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا ایک دفعہ پھر ثابت ہو گیا نوازشریف صادق بھی ہیں اور امین بھی۔ عمران خان کی ذہنی بیماری ناقابل علاج ہے۔
لاہور ؍ سانگلہ ہل (خبر نگار، خصوصی نامہ نگار، نمائندہ نوائے وقت) صوبائی وزیر بلدیات محمد منشاء اللہ بٹ نے سپریم کورٹ کے وزیراعظم نواز شریف کے حق میں فیصلہ آنے پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے آج کا دن تاریخی حیثیت رکھتا ہے۔ آج حقیقی جمہوریت کی فتح ہوئی اور مخالفین اپنے مذموم عزائم میں ناکام ہوئے ہیں تاریخ ساز فیصلہ مضبوط اور خوشحال پاکستان کی علامت ثابت ہوگا ہم آج بھی اپنے مخالفین کے ساتھ پاکستان کی تعمیر و ترقی میں کندھے سے کندھا ملا کر چلنے کو تیار ہیں۔ خصوصی نامہ نگار کے مطابق صوبائی وزیر قانون و پارلیمانی امور رانا ثناء اللہ خان نے کہا ہے کہ پانامہ کے حوالے سے عدالت عظمیٰ کا فیصلہ عظیم ہے اس سے جمہوریت مستحکم ہو گی سپریم کورٹ سے شیخ رشید، عمران خان کی دھرنا اور لاک ڈاؤن سیاست کا جنازہ نکلا ہے موجودہ قیادت پر الزام تراشی کا باب دفن ہو گیا۔ عمران خان کو اب سیاست سے توبہ کر لینی چاہئے۔ سانگلا ہل سے نمائندہ نوائے وقت کے مطابق وفاقی وزیر امور کشمیر و گلگت بلتستان چوہدری محمد برجیس طاہر نے تاریخی فیصلے پر مسرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے سپریم کورٹ کے فیصلے سے حق و انصاف کے ساتھ پورے پاکستان کے عوام اورجمہوریت کی فتح ہوئی جس سے بلاشبہ پاکستان کے روشن مستقبل کے امکانات واضح ہو گئے ہیں۔ نوازشریف پاکستان کی ترقی وخوشحالی کی علامت بن چکے ہیں۔ پاکستان کے عوام اور پاکستان کی عدالتوں نے عمران خان اور ان کی جماعت کے غلط موقف اور الزامات کو مسترد کر دیا ہے جس سے یہ بات مکمل طورپر واضح ہو گئی ہے مسلم لیگ (ن) محمد نواز شریف کی قیادت میں ملک کی ترقی وخوشحالی کا سفر جاری رکھے گی۔ انہوں نے کہا فیصلے سے عمران کی منفی اور دھرنا سیاست کا خاتمہ ہو چکا ہے۔