آپریشن ضرب عضب اور آئی ڈی پیز کی بحالی پر 1.3 ارب ڈالر خرچ ہونگے: اسحاق ڈار

اسلام آباد (آئی این پی) وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا ہے آپریشن ضرب عضب اور آئی ڈی پیز کی بحالی پر 1.3ارب ڈالر خرچ ہوں گے، حکومت پاکستان 40کروڑ ڈالر خرچ کر چکی، اب عالمی برادری دہشت گردی کے خلاف جنگ میں تعاون کر کے اپنا فرض ادا کرے، پاکستان کا مالیاتی خسارہ اگلے سال کے اختتام پر جی ڈی پی کے مقابلے میں 4فیصد پر آ جائیگا۔ وہ بدھ کو یہاں امریکی سینیٹر جیک ریڈ اوربرطانوی وزیر فرانس مائوڈے سے الگ الگ ملاقاتوں میں گفتگو کر رہے تھے۔ امریکی سنیٹر جیک ریڈ نے کہا یہ بات آسانی سے دیکھی جا سکتی ہے پاکستانی فوج نے آپریشن ضرب عضب تمام دہشت گردی کے خلاف شروع کیا، دہشت گردی عالمی برادری کا مشترکہ مسئلہ ہے اور اس کے خاتمے کیلئے مشترکہ کوششیں درکار ہیں۔ عالمی برادری کو چاہیے اس مسئلے کے حل کیلئے پاکستان کی مدد کرے۔ انہوں نے کہا آپریشن کے دوران افغانستان کا مثبت رویہ خوش آئند ہے۔ آپریشن ضرب عضب کا آغاز موجودہ حکومت کی دہشت گردوں کے خلاف جارحانہ پالیسی کا واضح اظہار ہے۔ دہشت گردی کے خلاف جنگ کی وجہ سے پاکستان کو کئی قسم کے معاشی مسائل کا سامنا ہے، حکومت آپریشن ضرب عضب پر اب تک چالیس کروڑ ڈالر خرچ کر چکی ہے جبکہ آپریشن کی کامیابی اور آئی ڈی پیز کی واپسی تک کل اخراجات کا تخمینہ ایک ارب تیس کروڑ ڈالر لگایاگیا ہے۔ لہٰذا عالمی برادری کو چاہیے کہ دہشت گردی کے خلاف پاکستان کی مدد کرے۔ برطانوی وزیر فرانسس ماڈے سے ملاقات میں وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ موجودہ حکومت مسلم لیگ (ن) کے منشور کے مطابق معاشی اصلاحات کے ایجنڈے پر عمل پیرا ہے۔ حکومتی کوششوں سے مالیاتی خسارہ جی ڈی پی کے مقابلے میں 5.5فیصد پر آ چکا ہے اگلے سال کے اختتام پر چار فیصد پر آ جائے گا۔ برطانوی وزیر نے کہا پاکستان کے حکومتی نظام میں شفافیت لانے کی ضرورت ہے اور برطانیہ اس حوالے سے مدد کیلئے تیار ہے۔