بجلی کی قلت 2280 میگاواٹ ہو گئی 6 سے 10 گھنٹے کی لوڈشیڈنگ

لاہور + اسلام آباد (کامرس رپورٹر + ریڈیو نیوز + ایجنسیاں) ملک میں گزشتہ روز بجلی کی قلت کا حجم 2280 میگاواٹ تک پہنچ گیا جس کے باعث اعلانیہ اور غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کا دورانیہ شہروں میں 6 سے 8 گھنٹے اور دیہاتوں میں 10 گھنٹے سے بڑھ گیا ہے۔ پیپکو کے ذرائع کے مطابق ملک میں بجلی کی مجموعی پیداوار 12675 میگاواٹ جبکہ اس کے مقابلے میں اس کی طلب 14955 میگاواٹ تک پہنچ گئی ہے۔ تیل اور گیس نہ ملنے سے صبا‘ پاک جن‘ اورینٹ‘ نشاط پاور‘ ہال مور جاپان نوڈیرو پاور ہاﺅسز بند ہو چکے ہیں جبکہ حبکو اور کیپکو کی بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت آدھی رہ گئی ہے۔ وفاقی وزیر پانی و بجلی سید نوید قمر کے مطابق بجلی کی لوڈشیڈنگ مکمل طور پر ختم نہیں ہوئی تمام بجلی تقسیم کار کمپنیوں کے نئے سربراہ مقرر کئے جائیںگے۔ صارفین بجلی کے بل ادا کرینگے تو ہی بجلی پیدا کرنے کیلئے پیسہ آئے گا۔ ادھر ذرائع کا کہنا ہے کہ تربیلا‘ منگلا اور غازی بروتھا سے پانی کا اخراج بھی کم ہوا ہے‘ پنڈی بھٹیاں سے نامہ نگار کے مطابق لوڈشیڈنگ سے محنت کشوں‘ تاجروں اور دکانداروں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔