پاکستان کو پولیو کے وائرس پی تھری سے پاک قرار دیدیا گیا

اسلام آباد/ لاہور (نوائے وقت نیوز+ نیوز ایجنسی) عالمی ادارہ صحت نے پاکستان کو پولیو کی خطرناک قسم پی تھری وائرس سے پاک قرار دیدیا۔ آٹھ اپریل 2012ءکو خیبر ایجنسی میں پی تھری وائرس کا آخری کیس سامنے آیا تھا۔ جون 2012ءمیں لئے گئے تمغہ سے پی تھری وائرس کے شواہد نہیں ملے۔ 2012ءمیں دنیا بھر میں پی تھری وائرس کے 21 کیسز سامنے آئے۔ عالمی خودمختار ادارہ برائے پولیو کی خصوصی ٹیم پاکستان پہنچ گئی، تین رکنی ٹیم پاکستانیوں پر سفری پابندیاں لگانے کیلئے مختلف تجاویز کا جائزہ لے گی جبکہ انٹرنیشنل مانیٹرنگ بورڈ نے لاہور میں پولیو کنٹرول روم کا دورہ کیا۔ عالمی پولیو ٹیم وفاقی اور صوبائی حکام سے ملاقات کرے گی اور انسداد پولیو کے حوالے سے حکومتی اقدامات کا جائزہ لے گی۔ ڈاکٹر پاول ایلن کی سربراہی میں پولیو ٹیم سات روزہ دورے کے دوران پاکستان سے متعلق حتمی رپورٹ اپنے مرکزی دفتر جنیوا میں پیش کرے گی۔ گزشتہ سال نومبر میں عالمی خودمختار پولیو ادارے نے پاکستان پر سفری پابندیاں لگانے کی سفارش کی تھی جس میں کہا گیا تھا کہ پاکستان نے پولیو پر قابو نہ پایا تو 31 مئی تک پاکستانی شہریوں کے غیرملکی سفر پر پابندی لگا دی جائے۔ علاوہ ازیں انٹرنیشنل مانیٹرنگ بورڈ کے تین رکنی وفد نے لاہور میں پولیو کنٹرول روم کا دورہ کیا اور متعلقہ حکام کی طرف سے پولیو کے تدارک کیلئے کئے جانیوالے اقدامات پر اطمینان کا اظہار کیا۔