عوام عدل کی بنیاد پر اپنے مسائل کے حل کے طلبگار ہیں: صدر ممنون

عوام عدل کی بنیاد پر اپنے مسائل کے حل کے طلبگار ہیں: صدر ممنون

اسلام آباد (آئی این پی) صدر مملکت ممنون حسین نے کہا ہے کہ عوام انصاف اور عدل کی بنیاد پر مسائل کے حل کے طلب گار ہیں، اچھا نظام حکومت صرف وہی ہے جو ملک کو ترقی کی راہ پر گامزن کر دے‘ سول سروس حکومت کا وہ ڈھانچہ ہے جو مختلف سرکاری محکموں کو مربوط طریقے سے کام کرنے کی بنیاد فراہم کرتا ہے، اس ڈھانچے کو ایمانداری، ذہنی لگائو، محنت اور کوشش سے مزید مضبوط بنایا جاسکتا ہے۔ وہ منگل کو 102 ویں نیشنل مینجمنٹ کورس کے شرکاء سے خطاب کررہے تھے۔ صدر مملکت نے کہا کہ ریاست کے فرائض میں یہ شامل ہے کہ وہ ایسا ماحول پیدا کرے جس میں افرادِ ملت اپنی صلاحیت کے مطابق اپنی سماجی اور اقتصادی حیثیت کو بہتر بنا سکیں اور اس سلسلے میں سول سرونٹس کا کردار بہت اہم ہے۔ صدر مملکت نے اس امر پر اطیمنان کا اظہار کیا کہ اس کورس کا بنیادی مقصد پبلک پالیسی کو بنانا اور اسے زمینی حقائق کے مطابق نافذ کرنا ہے۔ ایک باصلاحیت سرکاری ملازم فہم و فراست کے ساتھ لوگوں کے مسائل حل کرتا ہے۔ پاکستان سٹریٹیجی سپورٹ پروگرام کی تیسری عالمی کانفرنس کے افتتاحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے صدر ممنون حسین نے کہا کہ ترقی پذیر ملکوں کی طرح پاکستان کو بھی معاشی ترقی، غربت کے خاتمے، افرادی قوت کی ترقی اور قدرتی وسائل کی منصفانہ تقسیم جیسے چینلجز کا سامنا ہے۔ صدر ممنون حسین نے کہا ہے کہ زراعت اور قدرتی وسائل کا پاکستان کی معیشت میں کردار کلیدی ہے اور اس کی وجہ سے غربت میں کمی واقع ہورہی ہے۔ اس شعبے کے دیگر شعبہ جات میں رابطوں کے نتیجے میں تجارت، انڈسٹری اور خدمات کے شعبے بھی بہتری کی طرف گامزن ہیں۔ صدر مملکت نے امید ظاہر کی کہ یہ کانفرنس پاکستان اور اس کے عوام کو غذا کے حوالے سے محفوظ مستقبل تشکیل دینے میں اہم کردار ادا کرے گی۔اس موقع پر وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی و ترقی احسن اقبال، سیکرٹری منصوبہ بندی و ترقی حسن نواز تارڑ اور امریکی سفیر رچرڈ اولسن نے بھی خطاب کیا۔ ایوان صدر میں ریڈ کراس ناروے کے صدر سیون مولک لیو سے ملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے صدر مملکت نے دنیا بھر میں آفات خصوصاً پاکستان میں 2005 میں آنے والے زلزلے اور حالیہ سیلاب کے دوران ریڈ کراس کے کردار کو سراہا۔ صدر مملکت نے قدرتی آفات کے دوران ریڈکراس کی جانب سے دور دراز علاقوں میں عوام کی مشکلات کم کرنے اور امدادی سرگرمیوں میں حکومت کا ہاتھ بٹانے کی اہمیت پر بھی زور دیا۔ صدر مملکت نے کہا کہ قدرتی آفات جیسے انسانی فلاح و بہبود کا کام کرنے والی تنظیموں کی اہمیت بڑھ گئی ہے۔