عدم تعاون : ایچ ای سی نے 428 ڈگریوں کی تصدیق سے معذرت کر لی

اسلام آباد (عاصمہ غنی / دی نیشن + خبر نگار + ریڈیو مانیٹرنگ + اے پی پی) ارکان پارلیمنٹ کی ڈگریوں کی تصدیق کے معاملے میں ہائر ایجوکیشن کمشن اور الیکشن کمشن کے درمیان ایک نیا تنازعہ پیدا ہوا ہے۔ ہائر ایجوکیشن کمشن نے حتمی فہرست الیکشن کمشن کو پیش کر دی ہے اور 428 ڈگریوں کی تصدیق سے معذوری ظاہر کر دی ہے۔ دوسری جانب الیکشن کمشن ذرائع کے مطابق آئین کے آرٹیکل 220 کے تحت تمام ایگزیکٹو اتھارٹیز چیف الیکشن کمشنر اور الیکشن کمشن کی معاونت کے پابند ہیں اس طرح ہائر ایجوکیشن کمشن سپریم کورٹ کے آرڈر کے بعد ڈگری کی تصدیق کے عمل میں ہائر ایجوکیشن کمشن کسی صورت بھی الیکشن کمشن کو انکار نہیں کر سکتا۔ ہر حال میں انہیں ڈگریوں کی تصدیق کرنا ہو گی۔ تصدیق کا 70 فیصد کام مکمل ہو گیا باقی 30 فیصد بھی مکمل کرنا ہو گا۔ تصدیق میں اگر رکاوٹ ہو تو ہمیں بتائیں ان مشکلات کا ازالہ کیا جائے گا۔ ذرائع کے مطابق ہائر ایجوکیشن کمشن نے حتمی فہرست تیار کی تھی جو شام چھ بجے تک الیکشن کمشن کو ارسال کی گئی۔ فہرست کے مطابق الیکشن کمشن نے ہائر ایجوکیشن کمشن کو ایک ہزار چوراسی ڈگریاں تصدیق کے لئے بھیجی تھیں جن میں 553 کی مکمل طور پر تحقیق ہو چکی ہے‘ ان میں بی اے / میٹرک اور انٹر کی ڈگریاں شامل ہیں۔ ہائر ایجوکیشن کمشن نے 58 ڈگریوں کو جعلی قرار دیا اور ان ڈگریوں کی کوئی حیثیت نہیں رہی۔ اس کے علاوہ ڈگریاں ہیں جن کی میٹرک اور انٹر کی ڈگریوں کا ریکارڈ فراہم نہیں کیا گیا۔ اس کے علاوہ اٹھارہ ارکان ایسے ہیں جن کے کیسز عدالتوں میں چل رہے ہیں۔ ذرائع کے مطابق 428 ڈگریاں ایسی ہیں جن کی ہائر ایجوکیشن کمشن نے تصدیق نہیں کی۔ ان ڈگریوں کی تصدیق کے لئے ہائر ایجوکیشن کمشن نے فارم دیا تھا جس میں میٹرک اور انٹر کی ڈگریوں کی تصدیق کرانا تھی وہ پر نہیں کئے گئے ہیں۔ اس طرح چار سو اٹھائیس ڈگریاں ایسی ہیں جس پر ایچ ای سی نے کام نہیں کیا اور وہ جیسی تھیں ویسی کی بنیاد پر الیکشن کمشن کو واپس کرنے کا فیصلہ کیا۔ پشاور یونیورسٹی نے 123‘ پنجاب نے 218‘ سندھ یونیورسٹی نے 20 اور زکریا یونیورسٹی نے دس ڈگریوں کی تصدیق نہیں کی۔ دوسری جانب ذرائع سے معلوم ہوا ہے الیکشن کمشن نے الیکشن کمشن کی معذرت مسترد کرتے ہوئے لکھا ہے کہ وفاق اور صوبوں کے تمام ایگزیکٹو اتھارٹیز الیکشن کمشن اور چیف الیکشن کمشنر کی معاونت کے پابند ہیں۔ اس لئے ہائر ایجوکیشن کمشن کو حق نہیں پہنچتا کہ وہ اس قسم کی معذوری کرے۔ نجی ٹی وی ہائر ایجوکیشن کمشن نے ارکان پارلیمنٹ کے عدم تعاون کے باعث مزید ڈگریوں کی تصدیق سے معذرت کی۔ ایچ ای سی کا کہنا ہے کہ مزید ڈگریوں کی تصدیق میں ناکام ہو گئے ہیں کیونکہ یونیورسٹیاں ڈگریوں کی تصدیق میں تعاون نہیں کر رہیں‘ ہم ارکان پارلیمنٹ اور یونیورسٹیوںکی منتیں نہیں کر سکتے۔ 428 ارکان پارلیمنٹ نے ڈگریوں کی تصدیق کے لئے کاغذات فراہم نہیں کئے۔ جعلی ڈگریوں کی تعداد 58 ہے جبکہ 553 ڈگریاں درست ہیں۔ پشاور یونیورسٹی نے 123‘ سندھ یونیورسٹی نے 20‘ پنجاب یونیورسٹی نے 218‘ بہاءالدین زکریا یونیورسٹی نے 10 ڈگریوں کی تصدیق نہیں کی‘ اس لئے الیکشن کمشن خود تصدیق کرائے۔ اے پی پی کے مطابق ہائر ایجوکیشن کمشن کے چیئرمین جاوید لغاری نے میڈیا رپورٹس کی تردید کی ہے کہ ایچ ای سی نے ڈگریوں کی تصدیق سے معذرت کر لی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ڈگریوں کی تصدیق کا عمل جاری ہے۔ 353 ڈگریوں کی تصدیق کی جا چکی ہے مگر 428 ڈگریوں کی تصدیق بعض وجوہات کی بنا پر نہیں ہو سکی اور اس حوالے سے الیکشن کمشن کو ان کی فہرست بھیجی ہے‘ ان ارکان نے میٹرک کی سندیں یا دوسری امدادی دستاویزات نہیں بھیجیں۔
ڈگریاں