وزارتوں کی منتقلی پر عملدرآمد کمشن اور (ق) لیگ آمنے سامنے....رضا ربانی کی ایوان صدر طلبی‘ اجلاس ملتوی

اسلام آباد (آن لائن) وزارتوں کی صوبوں کو منتقلی کے معاملے پر پارلیمانی عملدرآمد کمشن اور مسلم لیگ ق واضح طور پر آمنے سامنے آگئے ہیں جبکہ عملدرآمد کمشن کے چیئرمین سینیٹر رضا ربانی کو ایوان صدر طلب کئے جانے کے باعث پیر کو ہونے والا اجلاس بھی انہی اختلافات کی بنا پر ملتوی کر دیا گیا۔کمشن کے ذرائع کے مطابق مسلم لیگ ق کے کمشن میں رکن سینیٹر وسیم سجاد جب سے عملدرآمد کمشن میں آئے ہیں وہ مسلسل باقی ماندہ آٹھ وزارتوں کی صوبوں کو منتقلی کی شدید مخالفت کر رہے ہیں جسے کمشن مسترد کر چکا ہے اس پر وسیم سجاد نے میاں رضا ربانی کو ایک خط بھی لکھا تھا جس میں انہوں نے مسلم لیگ کے پاس موجود وفاقی وزارتوں کی صوبوں کو منتقلی کی مخالفت کرتے ہوئے موقف اختیار کیا تھا کہ کمشن اس معاملے میں جلد بازی کر رہا ہے جس پر میاں رضا ربانی نے وسیم سجاد کو جوابی خط میں واضح کیا کہ عملدرآمد کمشن اپنے فیصلے اتفاق رائے سے کرتا آیا ہے، عملدرآمد کمشن کے پاس ایسا کوئی اختیار یا طریقہ کار نہیں کہ ہم آئین سے ہٹ کر کوئی فیصلہ کر سکیں۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ مسلم لیگ ق کے صدر چوہدری شجاعت حسین او رسینئر وفاقی وزیر چوہدری پرویزالہی بھی صدر اور وزیراعظم سے بھی باضابطہ طور پر مطالبہ کر چکے ہیں کہ صوبوں کو وزارتوں کی منتقلی کا عمل شفاف نہیں جبکہ صوبوں کو جانے والے بہت سے محکمے ایسے ہیں جو کہ وفاق کے دائرہ کار میں آتے ہیں مگر کمشن انکی بات سننے کو تیار نہیں گزشتہ روز ہونے والا اجلاس صوبوں کو منتقلی کے حوالے سے ہونا تھا مگر اچانک ایک ٹیلی فون کال کے آنے کے بعد رضا ربانی نے اسے ملتوی کر دیا۔
آمنے سامنے