کشمیر کو متنازعہ سمجھتے ہیں‘ یوٹرن لیں گے نہ اسکی گنجائش ہے : چین کا دو ٹوک اعلان

بیجنگ (اے این این) چین نے مقبوضہ کشمیرکے شہریوں کےلئے علیحدہ ویز وں کے اجراءکی پالیسی جاری رکھنے کااعلان کرتے ہوئے ایک بارپھردوٹوک الفاظ میں واضح کیاہے کہ وہ کشمیر کی متنازعہ حیثیت کے حوالے سے اپنے موقف پرعجلت میں کوئی یوٹرن لے گانہ اس کی گنجائش ہے،چین کی جانب سے یہ سخت پالیسی بیان ایک ایسے موقع پرسامنے آیاجب بھارتی وزیراعظم ڈاکٹرمن موہن سنگھ گروپ 5کے اجلاس میں شرکت کے سلسلے میں بیجنگ کے دورے پر ہیں ۔ گزشتہ روزچینی وزارت خارجہ کی خاتون ترجمان جیانگ ژو نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ اگرچہ چین بھارت کے ساتھ سرحدی تنازعات سمیت تمام معاملات پر با ت چیت کیلئے تیار ہے تاہم فی الوقت ہمارے لئے کشمیر کی متنازعہ حیثیت کے سلسلے میں اپنے موقف پر جلد بازی میں یو ٹرن لینے کی کوئی گنجائش موجود نہیں چین کشمیر کی متنازعہ حیثیت کو تسلیم کر رہا ہے اور کشمیری عوام کےلئے علیحدہ ویزوں کے اجراءکا سلسلہ جاری رکھے گا ۔ انہوں نے کہا کہ چین اور بھارت کے درمیان تعلقات کو فروغ دینے کی ہر ممکن کوشش کی جائے گی ۔ انہوں نے کہاکہ چین اوربھارت کے درمیان سرحدی تنازعہ موجود ہے جبکہ اروناچل پردیش کے حوالے سے بھی چین کا موقف برقرار ہے تاہم انہوں نے کہا کہ سفارتی سطح پر دونوں ممالک کے سربراہان ا ن معاملات پر ضرور بات چیت کریں گے کیونکہ چینی صدر ہوجن تاو¿نے پہلے ہی یہ واضح کیاتھا چین بھارت کے ساتھ تنازعات کے حل کیلئے مذاکرات جاری رکھے گا اور دونوں ممالک کے درمیان مختلف شعبوں میں تعلقات کو فروغ دیا جائے گا۔ ترجمان نے کہا کہ چین بھارت کے ساتھ مشترکہ فوجی مشقیں بھی کرسکتا ہے اس سلسلے میں مشاورت کا آغاز کر دیا گیا ہے۔واضح رہے کہ بھارتی وزیراعظم ڈاکٹرمن موہن سنگھ نے گروپ 5کے اجلاس میں شرکت کےلئے گزشتہ روزجونہی چین کی سرزمین پرقدم رکھا توچینی صحافیوں نے وزارت خارجہ کی ترجمان جیانگ ژوکوگھیرلیا اور ان پر کشمیر کے حوالے سے سوالوں کی بوچھاڑ کر دی۔
چین / یوٹرن