پاکستان ریلوے ،آمدن 18ارب سے بڑھ کر 40ارب ، لوکو موٹیوز 4سال میں دوگنے ہوگئے

اسلام آباد(خبر نگار)پاکستان ریلوے نے چار برسوں میں ستر برسوں کا سفر طے کرنے کی کوشش کی ہے جس کا کریڈٹ موجودہ انتظامیہ کو جاتاہے۔ ان چاربرسوں میں 160 لوکوموٹیوز بڑھ کر 324 ہوگئے، 518 ایکڑزمین ناجائز قابضین سے واگزار کروائی، اڑھائی ہزار زیر سماعت مقدمات میں سے ساڑھے آٹھ سو سے زائد مقدمات جیتے اور صرف4 فیصد میں ناکامی ہوئی ، انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ذریعے ای ٹکٹنگ کے انقلاب کے علاوہ آمدن کو 18 ارب سے چالیس ارب تک پہنچا دیا گیا۔ یہ اعدادو شمار مڈکیرئیر کورس کے شرکاءکو پاکستان ریلوے کی جانب سے ایڈیشنل جنرل منیجر ٹریفک عبدالحمید رازی کی سربراہی میں فاطمہ بلال ڈپٹی چیف آپریٹنگ سپرنٹنڈنٹ ٹائم ٹیبل اور فہد رحمان ڈائریکٹرآئی ٹی نے بریفنگ کے دوران پیش کیے۔شرکاءکے سوالات کے جوابات دیتے ہوئے ایڈیشنل جنرل منیجر ٹریفک عبدالحمید رازی نے کہا کہ ریلویز کے سسٹم میں کافی جدت آچکی ہے۔ پاکستان ریلوے میں پچھلے چار برسوں میں آئی ٹی کے ذریعے بہت سی سہولیات مسافروں اور ملازمین کے لیے متعارف کروائی گئیں ہیں جن میں ای ٹکٹنگ، ڈوپلیکیٹ ٹکٹ ، موبائل ایپ ، پنشنرز اور فائلوں کی ڈیجیٹائزیشن شامل ہیں۔ ڈائریکٹر آئی ٹی فہد رحمان نے وفد کو بتایا کہ ریلوے کی آمدن کا تقریباً 20 سے 22 فیصد اب ای ٹکٹنگ پر منتقل ہوچکاہے۔ ایڈیشنل جنرل منیجر ٹریفک عبدالحمید رازی نے کہا کہ ہم اپنے پورٹس اور فریٹ سیکٹرپرپہلے سے کہیں زیادہ توجہ دے رہے ہیں اور پچھلے مالی سال میں 36 ارب کا ٹارگٹ رکھا گیاتھا لیکن ٹارگٹ سے 4ارب زیادہ کمائے اس کی وجہ یہ ہے کہ ہم نجکاری نہیں کی بلکہ پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے ذریعے سہولت ، جدت اور معیار بہترکرتے جارہے ہیں اور کرتے رہیں گے۔اجلاس میں ریلوے کی جانب سے ایڈیشنل جنرل منیجر ٹریفک عبدالحمید رازی ، چیف پرسانل آفیسر چوہدری بلال سرور، سی او پی ایس ٹیکس فسیلی ٹیشن نوید مبشر ، چیف ٹریفک منیجر ڈرائی پورٹ ڈاکٹر حسن طاہر بخاری ، ڈپٹی چیف آپریٹنگ سپرنٹنڈنٹ ٹائم ٹیبل فاطمہ بلال، ڈپٹی چیف آپریٹنگ سپرنٹنڈنٹس محمودرحمن لاکھو اور ڈائریکٹر پبلک ریلیشنز قر ہ العین فاطمہ نے شرکت کی۔