جوڈیشل کمیشن نے ہائی کورٹ میں ججز کی تعیناتی میں میرٹ کو نظر انداز کیا ، سجاد اکبر عباسی

راولپنڈی ( نیوزرپورٹر) ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن راولپنڈی کے صدر سجاد اکبر عباسی نے کہا ہے کہ جوڈیشل کمیشن نے ہائی کورٹ میں ججز کی تعیناتی میں میرٹ کو نظر انداز کیا ہے من پسند افراد کو ایک سال کے لئے مزید کام کرنے کے احکامات جاری کئے گئے ہیں اور 7 ججز کا نام ڈراپ کر دیا گیا ہے جو انصاف کے منافی ہے ۔ جوڈیشل کمیشن کے فیصلے پراپنے موقف میں انہوں نے کہا کہ عدالتوں میں جو بھی ججزتعینات کئےجائیں ان کو پہلے دن سے ہی کنفرم ہونا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ ججز کی تعیناتی کے لئے ایک جیسا طریقہ کار اختیار کیا جانا چاہیے ۔جن ججز کو ڈراپ کیا گیا ہے ان کے فیصلوں کی اب کیا اہمیت رہ گئی ہے ۔ انہوں نے کیسز کی دوسری جگہ منتقلی کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ عدالتوں میں کیسز ایک ہی جگہ پر رہنے چاہیےں منتقلی سے فیصلے میں فرق ا ٓجاتا ہے جس کی ہم مذمت کرتے ہیں ۔ یادر ہے کہ گزشتہ روز چیف جسٹس ثاقب نثار کی صدارت میں ہونے والے جوڈیشل کمیشن نے ہائی کورٹ کے 7 ججز کی مدت ملازمت میں ایک سال کی توسیع کر دی جبکہ 7ججز کے نام توسیع سے ڈراپ کر دئیے ۔ اجلاس میں جسٹس مجاہد مقیم احمد، ، جسٹس طارق افتخار احمد،جسٹس اسجد جاوید،جسٹس طارق سلیم، جسٹس جواد حسن ،جسٹس عبدالعزیز اور جسٹس مزمل اختر بشیر کی مدت ملازمت میں ایک سال کی توسیع کی گئی ہے جبکہ جسٹس عبدالستار ،جسٹس حبیب الرحمان ،جسٹس اورنگزیب اور جسٹس بشیر پراچہ کے نام ڈراپ کر دیئے گئے ۔