امریکی وفد کے پاکستانی قیادت سے مذاکرات‘ رکاوٹوں کے باوجود خطے کے امن کیلئے کردار ادا کیا: آرمی چیف

اسلام آباد (نوائے وقت رپورٹ) امریکہ اور پاکستان کے درمیان دفتر خارجہ میں مذاکرات ہوئے۔ ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق امریکی وفد کی قیادت امریکی صدر کی نائب معاون جنوبی ایشیا لیزا کرٹس نے کی۔ امریکی وفد میں قائم مقام نائب وزیر خارجہ ایلس ویلز‘ قائم مقام نائب وزیر دفاع شامل تھے۔ امریکی وفد میں امریکی محکمہ خارجہ اور سفارتخانے کے سینئر حکام بھی شریک ہوئے۔ پاکستانی وفد کی قیادت سیکرٹری خارجہ تہمینہ جنجوعہ نے کی۔ افغانستان میں امریکی پالیسی کے تناظر میں تعلقات کی صورتحال کا جائزہ لیا گیا۔ پاکستان اور امریکہ نے باہمی دلچسپی کے تمام امور پر بات چیت جاری رکھنے پر اتفاق کیا۔ پاکستان کا افغان قیادت میں افغان مسئلے کے مذاکرات سے حل کے موقف کا اعادہ کیا۔ سیکرٹری خارجہ تہمینہ جنجوعہ نے کہا کہ پاکستان افغان مسئلے کے پرامن حل‘ علاقائی دوطرفہ میکنزم کا حصہ رہے گا۔ امریکی وفد کو پاکستانی سرزمین سے دہشتگردی کے خاتمے کی کوششوں سے آگاہ کیا گیا۔ ترجمان کے مطابق امریکی وفد کو سرحد پار سے ہونے والے مسلسل حملوں پر تشویش سے آگاہ کیا گیا۔ امریکی وفد کو مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فورسز کے مظالم سے آگاہ کیا گیا۔ دریں اثناء آئی ایس پی آر کے مطابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے امریکی صدر کی نائب معاون لیزا کرٹس کی سربراہی میں وفد نے ملاقات کی۔ امریکی وفد میں ایلس جی ویلز اور امریکی سفیر ڈیوڈ ہیل شامل تھے۔ امریکی وفد نے جنوبی ایشیا سے متعلق امریکی پالیسی پر بریفنگ دی، ملاقات میں خطے کی سکیورٹی صورتحال‘ پاک افغان تعلقات پر تبادلہ خیال کیا گیا خطے میں استحکام اور امن کے لئے پاکستان کے کردار پر بات چیت کی گئی۔ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے امریکی وفد کو خطے کی سکیورٹی سے متعلق پاکستان کے تحفظات سے آگاہ کیا اور کہا کہ تمام تر رکاوٹوں کے باوجود پاکستان نے خطے کے امن کیلئے بہت کچھ کیا۔ پاکستانی عوام کے عزم کے مطابق امن کیلئے کردار ادا کرتے رہیں گے۔ امریکی وفد نے دہشتگردی کیخلاف جنگ میں پاکستان کی کوششوں کو سراہا۔