اوگرا کے اعتراضات اور غلط بیانی پر قائمہ کمیٹی میں زاہد خان کا شدید احتجاج، واک آئوٹ

اسلام آباد (این این آئی) سینٹ کی قائمہ کمیٹی برائے قواعد ضوابط و استحقاق کے اجلاس میں سینیٹر عبدالرؤف کی ڈی سی او اور ڈی سی کراچی کے ناروا روئیے کے خلاف تحریک استحقاق اور سینیٹر زاہد خان صوابدیدی فنڈ سے مالاکنڈ اور لویر دیر سوئی گیس کے منصوبے پر وزارت پٹرولیم ، سوئی ناردن گیس  اور اوگرا سے منصوبے کی تاخیر کے حوالے سے بحث کی گئی۔کمیٹی قائمہ کمیٹی کا اجلاس چیئرمین کمیٹی سینیٹر کرنل (ر) سید طاہر حسین مشہدی کی زیر صدارت بدھ کو پارلیمنٹ ہائوس میں منعقد ہوا۔ سینیٹر زاہد خان کے صوابدیدی فنڈ سے لوئر دیر مالا کنڈ میں فراہمی گیس کی قائمہ کمیٹی کے اجلاسوں میں یقین دہانیوں کے باوجود عمل درآمد نہ ہونے کے حوالے سے سینیٹر زاہد خان نے کہا کہ کمیٹی کی کوششوں سے وزیراعظم پاکستان نے مجوزہ گیس منصوبے کی خصوصی منظوری دی ۔ حکومت پاکستان اور سوئی گیس کمپنی کے حصے کے فنڈز استعمال ہو چکے، بقیہ دس فیصد ترقیاتی کام پر عمل کیلئے اوگرا کی اجازت کی شرط ناقابل فہم ہے سینیٹر زاہد خان نے اوگرا کی طر ف سے اعتراضات اور کمیٹی کے اجلاس میں غلط بیانی پر شدید احتجاج کرتے ہوئے اجلاس سے احتجاجاً واک آؤٹ کیا ۔ سینیٹر میاں رضا ربانی، اعتزاز احسن، افراسیاب خٹک اور دوسرے اراکین نے سینیٹر زاہد خان کو راضی کر لیا، سیکرٹری پیڑولیم نے کہا کہ وزیراعظم کے خصوصی اجازت نامے، ایس این جی پی ایل کی رضا مندی کے بعد اوگرا کی طرف سے اعتراض معاملہ کو مزید اُلجھانے کی کوشش ہے ۔ ایم ڈی سوئی گیس عارف حمید نے کہا کہ وزیراعظم نے ملک بھر کے تمام جاری ترقیاتی منصوبوں کی منظوری دیدی ہے۔ وزیراعظم، وزارت ، سوئی گیس کی رضا مندی کے بعد اوگرا کا اعتراض درست نہیں۔ سیکرٹری پیڑولیم، ایم ڈی ایس این جی پی ایل سے چیئرمین اوگرا کی طویل بحث کے بعد اور سینیٹر اعتزاز احسن، افراسیاب خٹک کی طرف سے اٹھائے گئے آئینی و قانونی نکات کی روشنی میں چیئر مین اوگرا نے کمیٹی کو یقین دہانی کرائی کے آج ہی وزارت اور ایس این جی پی ایل کو خط لکھ کر منظوری حاصل کرنے کے بعد منصوبے پر کام کا آغاز کر دیا جائیگا۔