اقوام متحدہ اپنی ذمہ داری پوری کرے جنوبی سوڈان اور مشرقی تیمور میں رائے شماری ہو سکتی ہے تو کشمیر میں کیوں نہیں:برجیس طاہر

 اقوام متحدہ اپنی ذمہ داری پوری کرے جنوبی سوڈان اور مشرقی تیمور میں رائے شماری ہو سکتی ہے تو کشمیر میں کیوں نہیں:برجیس طاہر

اسلام آباد (آن لائن) وفاقی وزیر امور کشمیر و گلگت بلتستان چوہدری برجیس طاہر نے کہا ہے کہ پاکستان مسئلہ کشمیر کے حوالے سے اقوام متحدہ کی قراردادوں پر قائم ہے ، بھارت ظلم کرنے سے باز آئے ، ظلم زیادہ دیر نہیں چل سکتا ، اقوام متحدہ مسئلہ کشمیر کے حل میں اپنی ذمہ داری پوری کرے ورنہ اس کی حیثیت مردہ گھوڑے سے زیادہ نہیں ر ہے گی ، اگر جنوبی سوڈان اور مشرقی تیمور میں رائے شماری ہوسکتی ہے تو کشمیر میں کیوں نہیں۔ خصوصی انٹرویو میں  انہوں نے کہا کہ جواہر لال نہرو نے سرینگر کے لال چوک میں کشمیریوں کو حق خودارادیت دینے کا وعدہ کیا تھا اور اس نے سلامتی کونسل میں بھی یہ وعدہ دوہرایا ۔ آج بھی سلامتی کونسل کی قراردادیں موجود ہیں  بھارت جتنا مرضی کشمیر کو اپنا اٹوٹ انگ قرار دیتا رہے مگر کشمیر ایک متنازعہ علاقہ ہے اور اپنی حیثیت کے تعین  تک متنازعہ ہی رہے گا۔ حالیہ انتخابات میں کشمیریوں نے بھرپور ہڑتال کرکے بھارتی وزیراعظم مودی کو جواب دیدیا ہے۔ اگر یہ مسئلہ متنازعہ نہیں ہے تو اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون امریکہ اور چین نے اس میں ثالثی کا کردار ادا کرنے کی پیشکش کیوں کی ہے۔ وہاں ہونے والے مظالم پر  بھارتی انسانی حقوق کی تنظیمیں بھی آواز بلند کررہی ہیں۔کشمیر کا مسئلہ جنوب مشرقی ایشیا میں  سلگتی ہوئی چنگاری ہے جو کسی بھی وقت شعلہ بن سکتی ہے اور یہ اقوام متحدہ کیلئے ایک بڑا چیلنج ہے ہم دعوت دیتے ہیں کہ انسانی حقوق کی عالمی تنظیمیں   دونوں  طرف کے کشمیر کے دورے کریں اور حالات دیکھیں  ۔ وزیراعظم  نواز شریف نے بھارت کو مذاکرات کی پیشکش کی ہے کیونکہ جنگ مسائل کا حل نہیں لیکن اگر ہندوستان کو جنگ کا شوق ہے اور وہ کشمیر کا مسئلہ حل نہیں کرتا تو پاکستانی بھی غیرت مند قوم ہیں اور وہ گیدڑ کی سو سالہ زندگی سے شیر کی ایک دن کی زندگی کو ترجیح دیتے ہیں۔