متنازع افغان صدارتی انتخابات‘ پاکستان کا سرکاری بیان جاری کرنے سے گریز

اسلام آباد(سہیل عبدالناصر)   افغانستان میں یکدم  گمھبیر  ہونے والی سیاسی صورتحال پاکستان کیلئے بھی ایک آزمائش بن گئی ہے۔  پاکستان کی پشتون قوم پرست  جماعتیں افغانستان  میں اشرف غنی کی کامیابی پر خوش ہیں، آفتاب شیرپائو نے تو انہیں  مبارک باد کا پیغام بھی ارسال کر دیا ہے  لیکن  صدارتی انتخابات کے  نتائج پر تنازعہ کے باعث پاکستان  کی وزارت خارجہ نے  سکوت اختیار کرنے میں بہتری سمجھی ہے اور ابھی تک افغانستان کے صدارتی انتخابات کے نتائج کے بارے میں سرکاری بیان جاری کرنے سے گریز کیا گیا ہے۔  قبل ازیں افغانستان کے صدارتی انتخاب کی مہم اور  صدارتی انتخاب کے دونوں مراحل  کی تکمیل پر دفتر خارجہ نے  پرجوش بیانات جاری کئے تھے۔  واضح رہے کہ  افغانستان کے  صدارتی انتخاب کے دونوں مراحل مکمل ہو چکے ہیں۔ پہلے مرحلہ میں  سابق شمالی اتحاد کے اہم راہنماء   عبداللہ عبداللہ نے اکثریت حاصل کی اور توقع کی جا رہی تھی کہ دوسرے مرحلہ میں بھی وہی کامیاب ہوں گے لیکن حیرت انگیز طور پر دوسرے مرحلہ میں ان کے مخالف امیدوار اشرف غنی کی کامیابی کا اعلان کیا گیا۔اشرف غنی کو امریکہ کا حمایت یافتہ امیدوار سمجھا جاتا ہے۔ دفتر خارجہ کے ایک ذریعہ کے مطابق امریکی وزیر خارجہ کے دورہ کے نتیجہ میں صدارتی انتخاب کے نتائج کی صورتحال واضح ہونے کا امکان ہے ۔ اس ذریعہ کے مطابق افغانستان کی  سلامتی اور سیاست کے بارے میں کوئی بھی پیشرفت پاکستان پر ضرور اثرات مرتب کرتی ہے۔