سی ڈی اے میں غیر قانونی بھرتی ہونے والے ملازمین کیخلاف کارروائی شروع

اسلام آباد(وقائع نگار) وفاقی ترقیاتی ادارے ( سی ڈی اے ) کی انتظامیہ نے وزیر اعظم پیکج پر سی ڈی اے میں غیر قانونی طورپر بھرتی ہو نے والے ملازمین کیخلاف کاروائی کرنے کی ہدایات جاری کردی ہیں گزشتہ ادوار میں دوران سروس مرنے والے ملازمین کے لواحقین کے لیے اعلان کردہ وزیر اعظم کے پیکیج غلط استعمال کرتے ہوئے سی ڈی اے میں ایک درجن سے زائد افراد کو نوکریاں دی گئی ہیں ۔ ذرائع کے مطابق سی ڈی اے کے ممبرا یڈمنسٹریشن محمد یاسر پیرزادہ کی ہدایت پر سی ڈی اے انتظامیہ نے حالیہ ادوار میں ادارے میں وزیر اعظم پیکیج پر ہونے والی بھرتیوں کی چھان بین مکمل کرلی ہیں جس میں یہ انکشاف ہوا ہے کہ ایک درجن سے زائد ملازمین نے نہ صرف خلاف ضابطہ نوکریاں حاصل کی ہیں بلکہ جھوٹے بیان حلفی بھی داخل کروائے گئے ہیں ابتدائی انکوائری میں انتظامیہ نے چھ ایسے کیسسز نکالے ہیں جن میں مذکورہ پیکیج کے تحت اگر مرنے والی کی بیوہ نے نوکری حاصل کی تو اسی کیس میں غلط بیان حلفی داخل کروا کر اس کے بیٹے کو بھی نوکری دلوائی گئی ہے علاوہ ازیں نصف درجن ایسے کیسز بھی سامنے آئے ہیں جن میں مرنے والے کے لواحقین کی بجائے کسی دوسرے فرد کو جعلی دستاویزات تیار کروا کر نوکریاں دلوائی گئی ہیں وفاقی ترقیاتی ادارے کے شعبہ کانفیڈنشنل کی انکوائری کے بعد سکیورٹی ڈائریکٹوریٹ کو بھی یہ ہدایات جار ی کی گئی ہیں کہ مذکورہ نوعیت کی انکوائریاں فوری طورپر نمٹا کر ایڈمنسٹریشن کی دی جائیں تاکہ ان کے خلاف کاروائی عمل میں لائی جائیں ممبرایڈمنسٹریشن سی ڈی اے محمد یاسرپیرز ادہ نے اس نمائندے سے بات کرتے ہوئے مذکورہ معاملے کی تصدیق کی ہے اور کہا ہے کہ ابتدائی طور پر وزیر اعظم پیکیج کے تحت غیر قانونی طورپر بھرتی ہونے والے ملازمین کے خلاف ایچ آر ڈی کو کاروائی کرنے کی ہدایات جار ی کردی گئی ہیں اور ان کے خلاف ضابطے کی کاروائی عمل میں لائے جائے گی۔