سپریم کورٹ ڈی جی ایف آئی اے کو نہ ہٹانے کا آج جائزہ لے گی

اسلام آباد (آئی این پی) سپریم کورٹ حج انتظامات میں کرپشن پر لئے گئے ازخود نوٹس کی سماعت 15 مارچ کی بجائے آج کرےگی۔ اس دوران اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کی جانب سے ڈی جی ایف اے کو عہدے سے نہ ہٹانے کے حوالے جمع کرائی گئی رپورٹ کا بھی جائزہ لیا جائیگا۔ سپریم کورٹ کے چیف جسٹس افتخار محمد چودھری کی سربراہی میں جسٹس جاوید اقبال، جسٹس راجہ فیاض احمد، جسٹس سائر علی، جسٹس آصف سعید کھوسہ اور غلام ربانی پر مشتمل بنچ نے یکم مارچ کو سماعت کے دوران ڈی جی ایف آئی اے وسیم احمد کوتین روز میں عہدے سے ہٹانے کی مہلت دیتے ہوئے رپورٹ رجسٹرار آفس میں جمع کرانے کی ہدایت کی تھی تاہم گزشتہ روز اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کے سیکرٹری عبدالرﺅف چودھری نے عدالت میں رپورٹ جمع کرائی تھی کہ قومی سلامتی کے پیش نظر ڈی جی ایف آئی اے کوفوری طور پر نہیں ہٹایا جاسکتا تاہم انہیں حج انتظامات بدعنوانی کیس، نیشنل انشورنس کمپنی فراڈ کیس اورسٹیل مل بدعنوانی کیس سے الگ کردیا گیا ہے جس پر عدالت نے ڈائریکٹر جنرل ایف آئی اے کو عہدے سے نہ ہٹانے کا نوٹس لیتے ہوئے مقدمے کی سماعت15 کی بجائے (آج) 7 مارچ کو ہی فکس کرنے کے احکامات جاری کئے تھے۔
سپریم کورٹ/ جائزہ