چودھری نثار کو حکومتی کارکردگی مانیٹر کرنے کی اضافی ذمہ داری دیئے جانے کا امکان

اسلام آباد (محمد نواز رضا، وقائع نگار خصوصی) وزیراعظم محمد نواز شریف اور وفاقی وزیر داخلہ چودھری نثار علی خان کے درمیان ’’صلح‘‘ کے بعد چودھری نثار علی خان کو ’’حکومتی کارکردگی کی مانیٹرنگ‘‘ کرنے کی اضافی ذمہ داری دیئے جانے کا امکان ہے۔ چودھری نثار علی خان حکومت کی ایک سالہ کارکردگی سے مطمئن دکھائی نہیں دیتے  تھے۔ انہوں نے وزیر اعظم محمد نواز شریف سے اپنی ذات سے بالاتر ہو کر اصولوں پر کمپرومائز کئے بغیر صلح کی اور انکو یہ باور کرایا ہے کہ حکومت کی ناکامی ہم سب کی ناکامی ہے۔ انہوں نے وزیر اعظم محمد نواز شریف سے کہا کہ حکومتی کارکردگی بہتر بنانے کیلئے مانیٹرنگ سیل قائم کیا جائے جو عوام کو درپیش مشکلات دور کرنے میں کردار ادا کرے۔ ذرائع کے مطابق چودھری نثار علی خان اور وزیر اعظم محمد نواز شریف کے درمیان ’’صلح‘‘ اسی سطح پر ہوتی ہے جس سطح پر ماضی کے مختلف ادوار میں قائم رہے۔ نواز شریف چودھری نثار علی خان کی ملاقات سے اپوزیشن کے حلقوں میں مایوسی ہے۔ اپوزیشن کے حلقوں میں مسلم لیگ (ن) میں بڑا شگاف پڑنے کی قیاس آرائیاں کی جا رہی تھیں۔ وزیراعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف نے پل کا کردار ادا کر کے پارٹی کو بڑے صدمے سے دوچار ہونے سے بچا لیا۔ ذرائع کے مطابق وزیر اعظم محمد نواز شریف نے چودھری نثار علی خان کے اسلام آباد میں ڈاکٹر طاہرالقادری کا شو ناکام بنانے پر مبارکباد دی اور انہیں 14 اگست کو تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کے ’’لانگ مارچ‘‘ کا ٹاسک دیا۔ چودھری نثار نے وزیراعظم کو بتایا کہ وہ آئندہ چند روز میں اسلام آباد کو جلسے، جلوسوں کی سیاست سے محفوظ رکھنے کا پلان بنائیں گے اور اس بات کی یقین دہانی کرائی کہ 14اگست کو ہر صورت میں امن وامان کو یقینی بنایا جائیگا۔
وزیرداخلہ/ مانیٹرنگ