تعلیم اور روزگار دہشت گردی کے رجحان کو ختم کرسکتے ہیں: جاپانی سفیر

اسلام آباد (جاوید صدیق) پاکستان میں جاپان کے سفیر ہیروشی انیو ماتا نے کہا ہے کہ دہشت گردی کے خاتمے کیلئے فوجی ایکشن اور مذاکرات دونوں ساتھ ساتھ چلنے چاہئیں۔کوئی ایک طریقہ دہشت گردی ختم نہیں کرسکتا۔ وقت نیوز کے پروگرام ایمبیسی روڈ میں انٹرویو دیتے ہوئے پاکستان میں جاپان کے سفیر نے کہا کہ فاٹا میں تعلیم اور روزگار کے مواقع فراہم کرکے دہشت گردی کے رحجان کو ختم کیا جاسکتا ہے۔غربت لوگوں کو انتہاپسندی اور دہشت گردی کی طرف دھکیل دیتی ہے۔جاپان  کے سفیر نے کہا کہ پاکستان اور جاپان کے درمیان 62سال سے  سفارتی تعلقات ہیں۔ جاپان پاکستان کا معاشی ترقی میں ایک اہم پارٹنر ہے۔جاپان کے سفیر سے پوچھا گیا کہ وہ پاکستان اور چین کی دوستی کو کس نظر سے دیکھتے ہیں تو جاپانی سفیر نے کہا کہ پاکستان اور چین کے قریبی دوستانہ تعلقات ہیں اس سے خطے میں امن اور استحکام آئے گا۔ جاپان کے سفیر نے کہا کہ چین ایک ابھرتی ہوئی طاقت ہے لیکن اسے  عالمی امن کے قیام اور خطے میں استحکام کے لئے  ذمہ دارانہ کردار اداکرناچاہئے۔ ان سے پوچھا گیاکہ کیا وہ پاک بھارت تنازعات طے کرنے میں کوئی کردار ادا کریں گے  تو جاپان کے سفیر نے کہا کہ پاکستان اور بھارت دونوں کو بات چیت کے ذریعے مسائل حل کرنا چاہئیں۔افغانستان کے بارے میں سوال کے جواب میں جاپان کے سفیر نے کہا کہ افغانستان میں صدارتی انتخابات اور بین الاقوامی فوجوں کے انخلاء کے بعد وہاں امن اور استحکام میں پاکستان کا کردار بہت اہم ہے۔آپریشن متاثرین کی اقوام متحدہ کے ذریعے مدد کر رہے ہیں۔
جاپانی سفیر