بعض وزراءمنشیات سمگلنگ میں ملوث ہیں‘ لیاری میں ڈرگ وار چل رہی ہے : سپریم کورٹ

بعض وزراءمنشیات سمگلنگ میں ملوث ہیں‘ لیاری میں ڈرگ وار چل رہی ہے : سپریم کورٹ

اسلام آباد (آئی این پی/ اے پی اے) منشیات سمگلنگ کیس میں سپریم کورٹ نے ریمارکس دیئے ہیں کہ لیاری میں ڈرگ وار چل رہی ہے۔ ٹرانسپورٹ مالکان منشیات سمگل کرتے ہیں۔ چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے کہا ہے کہ مبینہ طور پر بعض وزراءبھی منشیات سمگلنگ میں ملوث ہیں۔ سپریم کورٹ میں منشیات سمگلنگ کیس کی سماعت کے دوران جسٹس اعجاز چوہدری نے ریمارکس دیئے کہ جب سے انسداد منشیات فورس بنی ہے منشیات کی سمگلنگ میں اضافہ ہی ہوا ہے۔ اے این ایف کے وکیل سلمان اکرم راجہ نے بتایا کہ ہمارے پاس اٹھارہ سو اہلکاروں کی ایک چھوٹی سی فورس ہے، افرادی قوت میں کمی کے باعث مشکلات کا سامنا ہے۔ چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے کہا کہ مبینہ طور پر بعض وزراءبھی منشیات سمگلنگ میں ملوث ہیں۔ جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیئے کہ لیاری میں ڈرگ وار چل رہی ہے، ٹرانسپورٹ مالکان منشیات سمگلنگ میں ملوث ہیں۔ چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے منشیات کی روک تھام کیلئے اے این ایف کے اٹھائے گئے اقدامات پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے ریمارکس دئیے ہیں کہ اے این ایف منشیات سمگلنگ کے خاتمے کیلئے کوئی کردار ادا نہیں کر رہا‘ جب سے اے این ایف کا قیام عمل میں آیا ہے منشیات کا کاروبار بڑھ رہا ہے‘ منشیات کی وجہ سے بچوں کی رگوں میں ناسور پھیل رہا ہے، وزراءاغواءبرائے تاوان اور منشیات سمگلنگ میں ملوث ہیں‘ اگر اے این ایف کام کرنا چاہتی ہے تو وہ دوسری فورسز سے بھی مدد طلب کر سکتی ہے۔ اس موقع پر اے این ایف حکام نے اپنی رپورٹ عدالت میں پیش کی جس پر عدالت نے عدم اعتماد کا اظہار کر دیا۔ چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے کہا ہے کہ منشیات ناسور کی طرح بچوں کی رگوں میں پھیل رہی ہے اور اے این ایف منشیات سمگلنگ کے خاتمے کیلئے کوئی کردار ادا نہیں کر رہا۔
اے این ایف