گاڑیوں کی ایمنسٹی سکیم غیر قانونی تھی‘ اربوں کا نقصان پہنچایا گیا : ٹیکس محتسب

اسلام آباد (نوائے وقت رپورٹ + ثناءنیوز) وفاقی ٹیکس محتسب شعیب سڈل نے کہا ہے گاڑیوں کی ایمنسٹی سکیم غیر قانونی تھی اور اس سکیم کے قوانین کی بھی دھجیاں اڑائی گئیں جس سے قومی خزانے کو اربوں روپے کا نقصان پہنچایا گیا۔ اسلام آباد میں نیوز کانفرنس کے دوران ان کا کہنا تھا ایمنسٹی سکیم کے تحت چوری اور ٹمپرڈ گاڑیاں بھی کلیئر کی گئیں۔ 887 گاڑیاں جاپان میں ہی تھیں لیکن ان کا ٹیکس کلیئر کر دیا گیا۔ صرف ٹوکیو یارڈ کی ہی 407 گاڑیاں تھیں، بعض نے تو فی گاڑی 18 لاکھ روپے کا ٹیکس بچایا۔ ان کا کہنا تھا سید امین اللہ کے ایک شناختی کارڈ پر 52، حبیب اللہ کے شناختی کارڈ پر 51 گاڑیوں کی ایمنسٹی دی گئی۔ ولی محمد اور عبدالولی کے شناختی کارڈ پر بھی پچاس پچاس گاڑیوں کی ایمنسٹی ملی۔ 61 شناختی کارڈز پر 1405 گاڑیوں کو ایمنسٹی دی گئی۔ ٹیکس چور ایک گاڑی کی بجائے پورا پورا شوروم کلیئر کراتے رہے۔ سکیم ختم ہونے کے 15 دن بعد بھی گاڑیاں کلیئر کی جاتی رہیں، 10 سال پرانی گاڑی پر صرف 500 ڈالر ٹیکس لیا گیا، انہوں نے کہا کمپیوٹرائزڈ انٹری کی گئی نہ گاڑیوں کے ڈیجیٹل نمونے لئے گئے، ٹیکس حکام نے بعض گاڑیوں پر 3 سے 5 لاکھ روپے رشوت بٹوری۔ ثناءنیوز کے مطابق شعیب سڈل نے نان کسٹم پیڈ گاڑیوں کی ایمنسٹی سکیم میں وسیع پیمانے پر قواعد و ضوابط کی خلاف ورزیوں، عدم شفافیت، بدانتظامی کے حوالے سے ہوشربا انکشافات کئے ہیں۔ انہوں نے کہا کراچی کے دو شہریوں نے 103 گاڑیاں کلیئر کرائیں۔ انہوں نے کہا اب تک ملک میں چھ ایمنسٹی سکیمیں متعارف کرائی گئیں موجودہ سکیم میں و سیع پیمانے پر گڑبڑ کی گئی، چھ بار اس سکیم کے ایس آر اوز میں ترامیم کی گئیں ناجائز مراعات دی گئیں۔ انہوں نے کہا اس سکیم کے تحت حھ اپریل تک 49462 گاڑیاں کلیئر کی گئیں، آخری رات 887 گاڑیوں کو کلیئر کیا گیا سب سے زیادہ گاڑیاں پشاور اور کوئٹہ میں کلیئر ہوئیں۔ انہوں نے کہا ہمیں صرف اب تک بارہ سو گاڑیوں کے شواہد ملے ہیں جو باہر تھیں۔ مشرق وسطیٰ، برطانیہ اور دیگر ممالک کے شورومز تک ہمیں رسائی نہیں مل رہی۔ انہوں نے امکان ظاہر کیا ایمنسٹی سکیم کے تحت 17 ہزار نان کسٹم پیڈ ایسی گاڑیاں جو ابھی پاکستان ہی نہیں پہنچ سکی تھیں کو کلیئر کر دیا گیا۔ انہوں نے کہا ان کا اب بھی یہی م¶قف ہے یہ سکیم غیر قانونی ہے اور ملک میں جو بھی نان کسٹم پیڈ گاڑیاں موجود ہیں قانون کے مطابق اپنی تحویل میں لے لیا جائے۔
شعیب سڈل