خصوصی کشمیر کمیٹی کا کام کرنا وسائل ضائع کرنے کے مترادف ہے: شیریں مزاری

خصوصی کشمیر کمیٹی کا کام کرنا وسائل ضائع کرنے کے مترادف ہے: شیریں مزاری

اسلام آباد (آئی این پی) تحریک انصاف کی سیکرٹری اطلاعات شیریں مزاری نے کہا ہے کہ قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے امور کشمیر و گلگت بلتستان اور وزارت خارجہ کی موجودگی میں خصوصی پارلیمانی کمیٹی برائے کشمیر کی کوئی ضرورت نہیں‘ قوم کو بتایا جائے کہ مولانا فضل الرحمن کی سربراہی میں قائم خصوصی کشمیر کمیٹی کی گذشتہ پانچ سالوں کے دوران کیا کارکردگی رہی ہے اور اربوں روپے ضائع کرنے کے باوجود مسئلہ کشمیر کے حل میں کیا پیشرفت ہوئی۔ خصوصی بات چیت میں شیریں مزاری نے کہا  قائمہ کمیٹی برائے امور کشمیر کی بریفنگ میں بتایا گیا کہ قائمہ کمیٹی اور وزارت امور کشمیر کے فرائض میں کشمیریوں کو حق خودارادیت دلوانے کا فریضہ بھی شامل ہے۔ جب وزارت امور کشمیر‘ اس کی قائمہ کمیٹی اور وزارت خارجہ مسئلہ کشمیر کے حوالے سے کام کرنے کی قانونی اتھارٹی رکھتی ہیں تو پھر اس کام کیلئے خصوصی کشمیر کمیٹی کا کام کرنا قومی وسائل ضائع کرنے کے مترادف ہے اور کمیٹی کی گذشتہ پانچ سالہ کارکردگی سے بھی ثابت ہوتا ہے کہ اس کمیٹی نے وسائل ضائع کرنے کے سوا کوئی کارکردگی نہیں دکھائی۔ خود کشمیری قیادت فضل الرحمن کی سربراہی میں قائمہ کشمیر کمیٹی کے حوالے سے تحفظات کا اظہار کرچکے ہیں۔