ڈرون حملوں کے حوالے سے عالمی قوانین پر عملدرآمد ہونا چاہئے ۔۔۔ پاکستان ، برطانیہ

  ڈرون حملوں  کے حوالے سے عالمی قوانین پر عملدرآمد ہونا چاہئے ۔۔۔ پاکستان ،  برطانیہ

اسلام آباد (ثناء نیوز+ اے پی اے) پاکستان اور برطانیہ نے ڈرون حملوں کو پاکستان کی سلامتی اور خودمختاری کی خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ  ڈرون حملوں کے حوالے سے عالمی قوانین پر عملدرآمد ہونا چاہئے۔ برطانوی سینئر وزیر سعیدہ وارثی کے ساتھ مشترکہ پر یس کانفرنس سے خطاب میں مشیر خارجہ سرتاج عزیر نے کہا کہ ڈرون حملے ہماری خود مختاری کی کھلی خلاف ورزی ہیں انہیں فوری بند ہونا چاہئے، وزیراعظم نواز شریف ڈرون  حملے رکوانے کیلئے سنجیدہ کوششیں کر رہے ہیں۔ وزیراعظم نے ڈرون حملوں کا معاملہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں بھی اٹھایا ہے۔ برطانیہ کے ساتھ تجارت، تعلیم، صحت اور دفاعی تعاون بڑھایا جائے گا۔ برطانیہ میں مقیم پاکستانی ہمارے لیے اہم اثاثہ ہیں ہم برطانیہ کے ساتھ سٹریٹجک شراکت داری کو مستحکم کرنا چاہتے ہیں، مشیر خارجہ نے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان نے سب سے زیادہ قربانیاں دیں پاکستان دہشت گردی میں 40 ہزار جانوں کی قربانی دے  چکا ہے بھارت کے بارے میں سرتاج عزیز نے کہا کہ بھارت بے جا الزام تراشی کر رہا ہے، پاکستان کے خلاف بھارت کو الزام تراشی کے رویئے سے باہر نکلنا چاہئے۔ مشیر خارجہ نے کہا کہ طالبان سے مذاکرات  کا مقصد امن کا قیام ہے ہم ملک میں امن و استحکام کے خواہشمند  ہیں کیونکہ امن کے بغیر ترقی ممکن نہیں۔  سعیدہ وارثی نے کہا ہے کہ پاکستان اور برطانیہ کے درمیان گہرے برادرانہ تعلقات ہیں، برطانیہ پاکستان کو سٹریٹجک شراکت دار سمجھتاہے۔ پاکستان اور بھارت کے درمیان کشمیر کا مسئلہ حل ہونا چاہئے تاکہ خطے میں امن قائم ہو۔ خطے کی بدامنی کی وجہ مسئلہ کشمیر ہی ہے۔  پاکستان گزشتہ حکومت کا آئینی مدت پوری کرنا خوش آئند ہے۔ موجودہ حکومت کی معاشی بحالی کے لیے پالیسیاں قابل تعریف ہیں، پاکستان میں معیشت کی ترقی کے لئے بیرونی سرمایہ کاری وقت کی ضرورت ہے۔ پاکستان میں اقلیتوں کے خلاف حملے قابل مذمت ہیں، پرامن زندگی سب کا تعلق ہے۔ ڈرون حملوں کے حوالے سے عالمی قوانین پر عملدرآمد ہونا چاہئے۔ اے پی اے کے مطابق دونوں ممالک نے 2015ء تک تجارت تین ارب پائونڈ تک لیجانے کا فیصلہ کیا ہے اور اس ہدف کو حاصل کیا جائیگا۔ سعیدہ وارثی نے کہا ہے کہ طالبان کیساتھ مذاکرات پاکستان کا اندرونی معاملہ ہے عوام نے حکومت کو مینڈیٹ دیا ہے فیصلہ حکومت نے کرنا ہے۔ کبھی پاکستان کی سیاست میں ملوث نہیں ہوئی اور نہ ہی دلچسپی رکھتی ہوں، برطانیہ کے موجودہ حکومت کے ساتھ تعلقات بھی پہلے جتنے مضبوط ہیں۔ علاوہ ازیں  سعیدہ وارثی نے  وزیر خزانہ  اسحاق ڈار سے بھی ملاقات کی جس  میں  پاک برطانیہ  تجارتی حجم  3 ارب پائونڈ  کرنے پر اتفاق کیا ہے۔ برطانیہ  نے توانائی  سمیت مختلف  شعبوں میں سرمایہ کاری کی پیشکش بھی کی۔